قومی ایئر لائن میں تین خواتین نے جنسی ہراسگی کی درخواستیں دے دیں

وفاقی محتسب نے حراسگی کا شکار ہونے والی لاہورکی ائرہوسٹس کو 22 اپریل کو طلب کر لیا اسلام آباد کی گرانڈ اسٹاف ثنا وحید نے بھی ایک افسر کے خلاف جنسی ہراسگی کی درخواست سی ای او ارشد ملک کو دے دی

جمعرات اپریل 21:55

قومی ایئر لائن میں تین خواتین نے جنسی ہراسگی کی درخواستیں دے دیں
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 18 اپریل2019ء) قومی ائر لائن کی 2 فضائی میزبان اور ایک گرانڈ اسٹاف نے بھی ہراسمنٹ کے خلاف وفاقی محتسب اور چیف ایگزیکٹیو آفیسر (سی ای او) پی آئی اے کو درخواستیں دے دیں۔پی آئی اے میں خواتین کے ساتھ حراسگی کے واقعات میں اضافہ ہو گیا۔ وفاقی محتسب نے حراسگی کا شکار ہونے والی لاہورکی ائرہوسٹس کو 22 اپریل کو طلب کر لیا جب کہ اسلام آباد کی گرانڈ اسٹاف ثنا وحید نے بھی ایک افسر کے خلاف جنسی ہراسگی کی درخواست سی ای او ارشد ملک کو دے دی۔

متاثرہ اہلکار ثنا وحید نے درخواست میں کہا کہ سی ای او ارشد ملک کے اسٹاف افسرکامران انجم نے مجھے اپنے سرکاری دفتر میں بلا کر ہراس کیا۔ہراسگی کا شکار ہونے والی دونوں فضائی میزبانوں نے پی آئی اے افسران کے خلاف وزیر اعظم سٹیزن پورٹل پر بھی درخواست دے دی۔

(جاری ہے)

پی آئی اے کی خاتون افسر کو مبینہ طور پر ہراساں کیے جانے کا سی ای او ارشد ملک نے نوٹس لے لیاواضح رہے کہ دو روز قبل پی آئی اے اسلام آباد کی خاتون افسر نے اہم انتظامی افسر کے خلاف ہراساں کیے جانے کی تحریری شکایت کی تھی جسے سی ای او نے منصفانہ تحقیقات کے لیے ائر لائن ویمن پروٹیکشن کمیٹی کو بھجوا دیا جب کہ کمیٹی کو معاملے کی جلد از جلد تحقیقات مکمل کرنے اور رپورٹ پیش کرنے کی ہدایات بھی کر دی۔

ترجمان پی آئی اے کے مطابق کمیٹی کی تحقیقات کے بعد ان کی سفارشات پر مکمل عملدرآمد کیا جائے گا جب کہ پی آئی اے کی موجودہ انتظامیہ خواتین کے حقوق اور ان سے کی جانے والی کسی بھی نا انصافی کے سد باب پر یقین رکھتی ہے۔

متعلقہ عنوان :