وفاقی کابینہ کے آخری اجلاس میں چند وزراء کی سخت باتوں کی وجہ سے اسد عمر جذباتی ہوگئے تھے

معیشت کی سمجھ بوجھ نہ رکھنے والے لوگوں نے سخت لہجہ اختیار کیا جس پر جذبات میں آ کر اسد عمر نے استعفیٰ دے دیا، تحریک انصاف کو وفادار اور دوستوں کی قدر کرنی چاہئے، اسد عمر کے فیصلے پاکستان کے حق میں تھے وہ لوگوں کو آئینہ دکھاتے تھے: رمیش کمار

muhammad ali محمد علی جمعہ اپریل 00:07

وفاقی کابینہ کے آخری اجلاس میں چند وزراء کی سخت باتوں کی وجہ سے اسد ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 اپریل2019ء) تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی رمیش کمار نے بتایا ہے کہ وفاقی کابینہ کے آخری اجلاس میں چند وزراء کی سخت باتوں کی وجہ سے اسد عمر جذباتی ہوگئے تھے، معیشت کی سمجھ بوجھ نہ رکھنے والے لوگوں نے سخت لہجہ اختیار کیا جس پر جذبات میں آ کر اسد عمر نے استعفیٰ دے دیا، تحریک انصاف کو وفادار اور دوستوں کی قدر کرنی چاہئے، اسد عمر کے فیصلے پاکستان کے حق میں تھے وہ لوگوں کو آئینہ دکھاتے تھے۔

تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کے رہنما رمیش کمار نے کہا ہے کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں چند ارکان نے سخت باتیں کیں جس کے باعث جذباتی ہو کر اسد عمر نے استعفیٰ دیا۔ رمیش کمار نے بتایا ہے کہ اسد عمر پر آخری کابینہ اجلاس میں تنقید کی گئی۔

(جاری ہے)

معیشت کی سوجھ بوجھ نہ رکھنے والے چند لوگوں نے سخت لہجہ اختیار کیا جس پر جذبات میں آ کر اسد عمر نے استعفیٰ دے دیا۔

چند وزراء نے کابینہ اجلاس میں مہنگائی سے متعلق معاملہ اٹھایا اور اسد عمر کیخلاف سخت لہجہ اختیار کیا۔ رمیش کمار کہتے ہیں کہ تحریک انصاف کو وفادار اور دوستوں کی قدر کرنی چاہئے۔ اسد عمر کے فیصلے پاکستان کے حق میں تھے وہ لوگوں کو آئینہ دکھاتے تھے۔ انہیں فارغ نہیں کیا گیا خود استعفیٰ دیا ہے۔ رمیش کمار نے کہا کہ اسد عمر تھنک ٹینک کو اہمیت نہیں دیتے تھے۔

معیشت چلانے کے لئے وزیر خزانہ کے بیک اپ میں ٹیم ضرور ہونی چاہئے اور وزیر خزانہ کی تھنک ٹینک کو اہمیت دینی چاہئے۔ واضح رہے کہ اسد عمر نے جمعرات کے روز وزارت خزانہ کے عہدے سے استعفیٰ دینے کا اعلان کیا۔ اسد عمر نے اعلان کیا کہ انہیں وزارت توانائی کے عہدے کی پیش کش کی گئی ہے، تاہم انہوں نے کوئی بھی وزارت لینے یا وفاقی کابینہ کا حصہ بننے سے معذرت کر لی ہے۔ جبکہ اسد عمر کے استعفیٰ کے بعد سابق وزیر خزانہ حفیظ شیخ کو مشیر خزانہ بنانے کا اعلان کیا گیا ہے۔