وزیراعظم کا ایک اور قریبی ساتھی، وفاقی کابینہ کے رکن سے اختیارات واپس لینے کا فیصلہ

مشیر تجارت عبدالرزاق داود کسی کی بات نہیں سنتے، کسی کو ساتھ لے کر نہیں چلتے، اس لیے وزیراعظم نے ان سے بھی کئی اختیارات واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے: مبشر لقمان

muhammad ali محمد علی ہفتہ اپریل 00:30

وزیراعظم کا ایک اور قریبی ساتھی، وفاقی کابینہ کے رکن سے اختیارات واپس ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 اپریل2019ء) وزیراعظم کا ایک اور قریبی ساتھی، وفاقی کابینہ کے رکن سے اختیارات واپس لینے کا فیصلہ، مبشر لقمان  کے مطابق مشیر تجارت عبدالرزاق داود کسی کی بات نہیں سنتے، کسی کو ساتھ لے کر نہیں چلتے، اس لیے وزیراعظم نے ان سے بھی کئی اختیارات واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق معروف اور سینئر صحافی مبشر لقمان کی جانب سے کہا گیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے فیصلہ کیا ہے کہ ان کی کابینہ میں موجود جو شخص کام نہیں کرے گا، اسے برطرف کر دیا جائے گا۔

مبشر لقمان نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ کابینہ کے اجلاس میں جب وزیر توانائی غلام سرور خان کو ان کی وزارت سے ہٹائے جانے کی اطلاع دی گئی، تو انہوں نے خوب ناراضگی کا اظہار کیا، اور تحریک انصاف چھوڑنے کی دھمکیاں بھی دیں۔

(جاری ہے)

تاہم وزیراعظم نے ان دھمکیوں کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے مایوس کن کارکردگی دکھانے پر غلام سرور خان کو وزارت توانائی کے عہدے سے ہٹانے کا حتمی فیصلہ سنایا۔

مبشر لقمان کا کہنا ہے کہ وزیراعظم فیصلہ کر چکے ہیں کہ اب جو بھی وزیر کام نہیں کرے گا، اسے عہدے سے ہاتھ دھونا پڑے گا۔ مبشر لقمان مزید بتاتے ہیں کہ وزیراعظم نے جہاں اسد عمر، کو وزارت خزانہ سے ہٹایا ہے، وہیں وہ اب اپنے قریبی ساتھی مشیر تجارت عبدالرزاق داود کے اختیارات میں بھی کمی کرنے جا رہے ہیں۔ مشیر تجارت عبدالرزاق داود سے متعلق مشہور ہے کہ وہ کسی کی بات نہیں سنتے، کسی کو ساتھ لے کر نہیں چلتے۔ ان کی عمر بھی کافی ہو چکی ہے۔ اس لیے وزیراعظم نے مشیر تجارت عبدالرزاق داود کے اختیارات کو بھی محدود کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔