پاکستان میڈیکل سنٹر کے حوالے سے منعقدہ تقریب میں بشریٰ انصاری کی شرکت

چند ماہ بعد پایۂ تکمیل کو پہنچنے والا یہ میڈیکل سنٹر فلاحی بنیادوں پر طبی خدمات فراہم کرے گا

Muhammad Irfan محمد عرفان ہفتہ اپریل 17:04

پاکستان میڈیکل سنٹر کے حوالے سے منعقدہ تقریب میں بشریٰ انصاری کی شرکت
دُبئی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔21 اپریل 2019ء) پاکستان میڈیکل سنٹر چار ماہ بعد طبی خدمات کی فراہمی شروع کر دے گا۔ یہ میڈیکل سنٹر خلیجی ممالک کی تاریخ کا پہلا طبی ادارہ ہے جو کسی بھی تارکینِ وطن کی کمیونٹی کی جانب سے تعمیر کیا گیا ہے اور لوگوں کو بلامعاوضہ علاج و معالجے کی سہولیات فراہم کرے گا۔ اس میڈیکل سنٹر کی تعمیر پاکستان ایسوسی ایشن (Pad) کی جانب سے کی جا رہی ہے۔

پاکستان میڈیکل سنٹر کی فلاحی بنیادوں پر تعمیر و قیام کو اُجاگر کرنے کے حوالے سے دُبئی میں ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں دُبئی میں مقیم 300سے زائد پاکستانیوں نے شرکت کی۔ جبکہ مشہور پاکستانی اداکارہ بشریٰ انصاری بھی اس پروگرام میں شرکت کے لیے خاص طور پر پاکستان سے تشریف لائیں۔ یہ میڈیکل سنٹر پاکستانی کمیونٹی نے اپنی مدد آپ کے تحت تعمیر کیا ہے اور اگست 2019ء میں علاج معالجے کی فراہمی شروع کر دے گا۔

(جاری ہے)

اس زیر تعمیر میڈیکل کمپلیکس کے گراؤنڈ فلور پر ایک آفس بلاک، مسجداو رریسٹورنٹ بنائے گئے ہیں۔ جبکہ فسٹ فلور پر میڈیکل سنٹر کے علاوہ فٹنس اور بحالی کا ادارہ، میٹنگ روم اور بچوں کے کھیلنے کے لیے پلے ایریا بھی ہو گا۔ اس میڈیکل سنٹر کی تعمیر کے لیے پندرہ ہزار پاکستانیوں نے 1ہزار درہم فی کس کے حساب سے مالی امداد دی۔ اس طرح اس کی تعمیر پر کُل 15 لاکھ درہم کی لاگت آئی ہے۔

میڈیکل سنٹر کی اہمیت کے حوالے سے گالا ڈنر کا اہتمام فائیو پام جمیرہ میں کیا گیا تھا۔ اس موقع پر ایک پینل گفتگو کا اہتمام بھی کیا گیا۔ جس میں اس میڈیکل سنٹر کے قیام کی اہمیت کو اُجاگر کیا گیا۔ اس حوالے سے ڈاکٹر آفتاب نے بتایا کہ اس میڈیکل سنٹر کی تعمیر سے دُبئی میں مقیم غریب مریضوں کو فائدہ ہو گا۔ یہاں ہر مُلک، مذہب اور نسل سے تعلق رکھنے والے امیر اور غریب مریضوں کو لاحق مختلف بیماریوں کا علاج کیا جائے گا۔ اس موقع پر بشریٰ انصاری نے اپنے چٹکلوں سے حاضرین کو خوب محظوظ کیا۔ انہوں نے پاکستان میڈیکل سنٹر کی تعمیر کو ایک شاندار فلاحی منصوبہ قرار دیا۔ جس سے مستحق اور غریب لوگوں کا بہت بھلا ہو گا۔