لاہور ہائی کورٹ : انکم سپورٹ لیوی ٹیکس چیلنج

حمزہ شہباز سمیت 149 درخواست گزاروں کی درخواستیں مسترد

جمعرات اپریل 21:43

لاہور ہائی کورٹ : انکم سپورٹ لیوی ٹیکس چیلنج
لاہور (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - آن لائن۔ 25 اپریل2019ء) لاہور ہائی کورٹ نے حمزہ شہباز سمیت 149 درخواست گزاروں کی درخواستیں مستردکر دیں۔ عدالت نے حمزہ شہباز کی درخواست خارج کرتے ہوئے محفوظ فیصلہ سنا دیا ۔جسٹس عاصم حفیظ نے حمزہ شہباز کی درخواست پر فیصلہ سنادیا ۔حمزہ شہباز شریف سمیت 149 درخواست گزاروں نے لاہور ہائی کورٹ سے رجوع کیا۔درخواست گزاروں کی جانب سے انکم سپورٹ لیوی ٹیکس چیلنج کیا گیا۔

ان لینڈ ریونیو کے انکم سپورٹ لیوی ٹیکس کے نوٹسز قانونی قرار دے دیئے گئے۔حمزہ شہباز کی درخواست میں وفاقی وزارت قانون ،وزارت مذہبی امور اور ایف بی آر کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ درخواست گزار ایک رجسٹرڈ ٹیکس پیئر ہے اور فقہ کے مطابق زکوٰة بھی ادا کرتا ہے۔

(جاری ہے)

درخواست گزار نے ہمیشہ قانونی طور پر ٹیکس ادا کیا اور کبھی ڈیفالٹ نہیں کیا۔

ٹیکس عوامی مقاصد کیلئے حکومت کی جانب سے وصول کی جانے والی رقم ہے۔ انکم ٹیکس لیوی سپورٹ ایکٹ 2013 آرٹیکل 73 کے سیکشن 2 اے سے متصادم ہے۔18ویں آئینی ترمیم کے تحت سوشل ویلفیئر صوبائی معاملہ ہے۔حمزہ شہباز نے درخواست میں استدعا کی کہ ان لینڈ ریونیو کی جانب سے انکم سپورٹ لیوی کی وصولی کالعدم قرار دی جائے۔ ان لینڈ ریونیو کی جانب سے حمزہ شہباز کو 12 لاکھ روپے ٹیکس جمع کروانے کی ہدایت کی گئی۔