آصف علی زرداری کی نیب میں پیشی

پارٹی قیادت پر کیس سیاسی ہیں‘کوئی الزام ثابت نہیں ہوسکا. فاروق نائیک

Mian Nadeem میاں محمد ندیم جمعرات مئی 16:29

آصف علی زرداری کی نیب میں پیشی
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔15 مئی۔2019ء) سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری قومی احتساب بیورو راولپنڈی میں پیش ہوگئے ہیں. نیب راولپنڈی نے بد عنوانی سے متعلق متعدد کیسز اور جاری تحقیقات میں تفتیش کے لیے سابق صدر آصف زرداری کو طلب کررکھا تھا‘آصف زرداری کی نیب میں پیشی کے موقع پر ان کے وکیل فاروق ایچ نائیک، پیپلزپارٹی کے راہنما نیر بخاری، رکن قومی اسمبلی نفیسہ شاہ اور دیگر راہنما بھی نیب آفس پہنچے.

نیب میں آصف زرداری کی پیشی کے بعد ان کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین پر لگائے گئے تمام الزامات کو مسترد کردیا. انہوںنے کہا کہ آج کے کیس میں آصف زرداری کو ملزم نہیں بنایا گیا، اس کے باوجود سابق صدر کو آج طلب کیا گیا تھا. انہوں نے بتایا کہ پارک لین کیس میں بھی ایک نوٹس بھیجا گیا ہے، پارک لین میں آصف زرداری میں نہ ڈائریکٹر ہیں اور نہ ہی شیئر ہولڈر جبکہ پارک لین کے دیگر ڈائریکٹرز نے قرضہ لیا جس کا آصف زرداری کو کوئی علم نہیں.

فاروق ایچ نائیک نے کہاکہ آصف زرداری کو سوال نامہ نہیں دیا گیا، الزام لگا کر کسی کو بدنام کرنا بہت آسان ہوتا ہے، ثابت کرنا مشکل اور ساتھ ہی دعویٰ کیا کہ جتنے بھی الزامات لگ رہے ہیں ان میں سرخرو ہوں گے. انہوں نے کہا کہ آصف زرداری کے خلاف تاحال ایک ہی ریفرنس دائر کیا گیا ہے جبکہ جعلی اکاﺅنٹس کیس میں آصف زرداری کا کوئی کردار نہیں. فاروق نائیک نے کہاکہ آصف زرداری کے خلاف جعلی اکاﺅنٹس کیس کے علاوہ تاحال نیب کی جانب سے کوئی ریفرنس دائر ہی نہیں ہوا۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ شوگر ملز مالکان نے کس اکاﺅنٹ سے پیسے دیئے اس سے آصف زرداری کا کوئی تعلق نہیں، آصف زرداری کے خلاف جعلی اکاﺅنٹس کیس نہیں بنتا جبکہ بلاول بھٹو کا تو بلکل کوئی کردار نہیں‘انہوں نے کہا کہ آصف زرداری کو ان کیسز میں طلب کیا جا رہا ہے جن کیسز میں وہ ملزم نامزد ہی نہیں ہوئے.

فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری بلکل معصوم ہیں، پارک لین سمیت دیگر مقدمات میں ان کا کوئی کردار نہیں‘ پیپلز پارٹی کی قیادت ان تمام کیسز سے سرخرو ہوگئی. اس سے قبل 25 مارچ 2019 کو سابق صدر آصف علی زرداری اور پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پارک لین اسٹیٹ کرپشن کیس کی تحقیقات کے سلسلے میں قومی احتساب بیورو (نیب) میں پیش ہوکر اپنے بیانات قلم بند کرائے تھے.

قبل ازیں اسلام آباد میں ایک کمپنی پارک لین اسٹیٹ پرائیویٹ لمیٹیڈ کی جانب سے مبینہ طور پر زمین کی خریداری کی تحقیقات کے سلسلے میں نیب نے گزشتہ سال 13دسمبر کو آصف علی زرداری اور بلاول دونوں کو راولپنڈی میں طلب کیا تھا البتہ صرف آصف علی زرداری عدالت میں پیش ہوئے تھے اور بلاول کی نمائندگی ان کے وکیل نے کی تھی جبکہ گذشتہ روز اسلام آباد ہائیکورٹ نے قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے خلاف جاری 6 کرپشن کے کیسز میں عبوری ضمانت منظور کی تھی.