کالعدم تحریک طالبان نے وزیرستان میں دہشت گرد حملے کی ذمہ داری قبول کر لی

گزشتہ روز خڑکمر کے علاقے میں پاک فوج کے قافلے کو نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں 3 فوجی افسران اور ایک اہلکار جام شہادت نوش کر گئے تھے

muhammad ali محمد علی ہفتہ جون 19:11

کالعدم تحریک طالبان نے وزیرستان میں دہشت گرد حملے کی ذمہ داری قبول ..
خڑکمر (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 08 جون2019ء) کالعدم تحریک طالبان نے وزیرستان میں دہشت گرد حملے کی ذمہ داری قبول کر لی، گزشتہ روز خڑکمر کے علاقے میں پاک فوج کے قافلے کو نشانہ بنایا گیا جس کے نتیجے میں 3 فوجی افسران اور ایک اہلکار جام شہادت نوش کر گئے تھے۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز شمالی وزیرستان میں پاک فوج کے قافلے پر کیے گئے حملے کی ذمے داری قبول کر لی گئی ہے۔

افغانستان میں موجود کالعدم تحریک طالبان کے نیٹ ورک نے شمالی وزیرستان کے علاقے خڑکمر میں پاک فوج پر کیے گئے بارودی سرنگ کے حملے کی ذمے داری قبول کر لی ہے۔ واضح رہے کہ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کی جانب سے فراہم کردہ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز شمالی وزیرستان میں افسوسناک واقعہ پیش آیا۔ شمالی وزیرستان کے علاقے خڑکمر میں دھماکہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں 3 فوجی افسران اور ایک اہلکار شہید ہوگئے۔

(جاری ہے)

فوجی قافلے پر حملہ خڑکمر کے علاقے میں کیا گیا۔ فوجی گاڑی بارودی سرنگ سے ٹکرانے کے باعث دھماکے سے تباہ ہوگئی جس باعث 4 فوجی جوان شہید ہوگئے۔ جبکہ حملے میں 4 فوجی جوان شدید زخمی بھی ہوئے۔ آئی ایس پی آر کی جانب سے فراہم کردہ مزید تفصیلات کے مطابق شہید ہونیوالوں میں لیفٹیننٹ کرنل راشدکریم بیگ، میجر معیز مقصود، کیپٹن عارف اللہ اور لانس حوالدار ظہیر شامل ہیں۔

شہید لیفٹیننٹ کرنل راشد کریم بیگ کا تعلق ہنزہ کےعلاقے کریم آباد سے تھا۔ شہید میجرمعیز مقصود بیگ کا تعلق کراچی، کیپٹن عارف اللہ کا تعلق لکی مروت جبکہ لانس حوالدار ظہیر کا تعلق چکوال سے تھا۔ مزید بتایا گیا ہے کہ اسی مقام پر فورسز نے سرچ آپریشن کرکے دہشت گردوں کے چند سہولت کاروں کو گرفتار کیا تھا۔ اب اسی مقام پر پاک فوج کے قافلے کو دہشت گردی کا نشانہ بنایا گیا۔ گزشتہ ایک ماہ میں شمالی وزیرستان میں مکتلف واقعات میں 10 سیکیورٹی اہلکار شہید جبکہ 35زخمی ہوچکے ہیں۔