مجاہد اول سردار عبدالقیوم خان کی سیاسی فکری اور نظریاتی تربیت کی وجہ سے آزادکشمیر سیاسی کارکنوں کے معاملے میں باوقار رہا ہے، سینئر وزیر چودھری طارق فاروق

جمعہ جولائی 00:02

مظفرآباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 11 جولائی2019ء) آزادکشمیر حکومت کے سینئر وزیر چودھری طارق فاروق نے کہا ہے کہ مجاہد سردار محمد عبدالقیوم خان آزادکشمیر کے تمام سیاسی کارکنوں اور خطے کی تمام سیاسی جماعتوں کے لیے قابل قبول سیاسی شخصیت کے حامل تھے، ان کے سیاسی ورثہ میں نظریہ اور مخصوص سیاسی طرز عمل موجود ہے، سیاست کو باوقار بنانے کے لیے ان کا کردار تاریخ کا حصہ بن چکا ہے، رئیس الاحرار چودھری غلام عباس کے بعد نظریہ الحاق پاکستان اور مسلم کانفرنس کے ساتھ ساتھ خطہ کے اندر غیر متعصبانہ سیاست کو زندہ رکھنا آسان کام نہیں تھا مگر انہوں نے اپنے عمل کردار ،محنت کے ذریعے یہ ناممکن کام ممکن بنایا ۔

مسلم کانفرنس کو کامیاب نظریاتی و سیاسی جماعت بنانے میں ان کی سوچ و فکر ،حکمت ،تدبر ،دانش اور صلح جوئی کا بڑا عمل دخل ہے، یہی وجہ ہے کہ تمام سیاسی کارکن اور دینی مکاتب فکر ان کی عزت و تکریم کرتے ہیں اور ان کے کردار کو سلام پیش کرتے ہیں ۔

(جاری ہے)

اپنے آفس چیمبر میں سینئر صحافیوں کے ساتھ بات چیت کے دوران چودھری طارق فاروق نے کہا کہ مجاہد اول سردار عبدالقیوم خان اگرچہ با ضابطہ طور پر کسی یونیورسٹی سے فارغ التحصیل نہیں تھے مگر محنت ،فکری تدبر کی وجہ سے بذات خود ایک مکمل یونیورسٹی کا درجہ رکھتے تھے ۔

ہر سطح پر مشاورت ان کی زندگی کا معمول تھا ۔اپنے سے زیادہ عقل مند دانش ور اور فہم و فراست کی حامل علمی،دینی ،ادبی و سیاسی شخصیات سے بحث کرتے تھے ۔اپنے دور صدارت اور دور وزارت اعظمی کے دوران مسئلہ کشمیر اور ریاست جموں و کشمیر کے مسائل پر جو خط و کتابت حکومت پاکستان اور متعلقہ اداروں کے ساتھ کی وہ سیاسیات اور تاریخ کے طالب علموں کے لیے اہم اثاثہ ہے ۔

اپنی متوازن سوچ و فکر کی بنیاد پر ہم عصر سیاست دانوں کو پیچھے چھوڑا مگر ان کی عزت و تکریم کا ہمیشہ خیال رکھا انہیں جائز مقام دیا ۔انتشاری سیاست سے ہمیشہ دور رہے ۔آزادکشمیر میں سیاسی کارکنوں کی ایک کھیپ تیا ر کی آج کے مروجہ سیاسی ماحول میں موجود اور سرگرم سیاسی کارکنوں کی اکثریت مجاہد اول کے سکول آف تھاٹس سے فارغ التحصیل ہے ۔سردار سکندر حیات کا مقام ان میں اہمیت کا حامل ہے ، ان کی سیاسی فکری اور نظریاتی تربیت کی وجہ سے آزادکشمیر سیاسی کارکنوں کے معاملے میں باوقار رہا ہے ۔