اسلام آباد کی درجنوں بلند و بالا عمارتوں کو سیل کرنے کا فیصلہ

ٹیکس کی عدم ادائیگی پر وفاقی دارالحکومت کے کل 59 کمرشل پلازوں کو سیل کر دیا جائے گا

muhammad ali محمد علی جمعرات جولائی 21:30

اسلام آباد کی درجنوں بلند و بالا عمارتوں کو سیل کرنے کا فیصلہ
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 جولائی2019ء) اسلام آباد کی درجنوں بلند و بالا عمارتوں کو سیل کرنے کا فیصلہ، ٹیکس کی عدم ادائیگی پر وفاقی دارالحکومت کے کل 59 کمرشل پلازوں کو سیل کر دیا جائے گا۔ تفصیلات کے مطابق وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں غیر قانونی کمرشل پلازوں کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈاون کے آغاز کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی نے کمرشل پلازوں کے ٹیکس واجبات کی عدم ادائیگی پر اسلام آباد کی 59 عمارتیں سیل کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ یہ جائیدادیں وفاقی دارالحکومت کے پوش سیکٹرز میں واقع ہیں۔ سی ڈی اے شعبہ ریونیو نے وفاقی دارالحکومت میں ٹیکس ادا نہ کرنے والے بڑے پلازوں اور شاپنگ مالز کی فہرست مرتب کر لی ہے۔

(جاری ہے)

ٹیکس ادا نہ کرنے والوں میں سیکٹر آئی ٹین کی سب سے زیادہ 24، سیکٹر آئی نائن اور سیکٹر آئی ایٹ کی 8، 8 جبکہ سیکٹر جی سکس اور بلیو ایریا کی 4، 4 جائیدادیں شامل ہیں۔

سیکٹر ایف ایٹ، ایف ٹین اور جی ٹین کی 3، 3 پراپرٹیز کا بھی ٹیکس ادا نہیں کیا گیا۔ سیکٹر ایف الیون میں بھی دو کمرشل پلازوں کو ٹیکس کی عدم ادائیگی پر سیل کیا جائے گا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ چند روز میں مزید سیکٹرز میں کارروائی کی جائے گی۔ جبکہ واضح رہے کہ گزشتہ برس تحریک انصاف نے اقتدار میں آنے کے بعد اسلام آباد میں بڑے پیمانے پر ناجائز تجاویزات کیخلاف آپریشن کا آغاز کیا تھا۔

اس آپریشن کے دوران وفاقی حکومت نے اربوں روپے مالیت کی سرکاری زمین پر سے قبضہ ختم کروایا تھا۔ جبکہ اب اسلام آباد میں ٹیکس ادا نہ کرنے والی کمرشل عمارتوں کیخلاف کاروائی کا آغاز کر دیا گیا ہے۔