ایران تیل کی برآمد ہر صورت جاری رکھے گا، جواد ظریف

تیل برآمد جاری رکھنے کے بارے میں برطانوی وزیرخارجہ کو بذریعہ ٹیلی فون آگاہ کردیا ہے،بیان

اتوار جولائی 14:55

جنیوا(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 14 جولائی2019ء) ایرانی وزارت خارجہ نے بتایا ہے کہ وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے اپنے برطانوی ہم منصب جیریمی ہنٹ سے ٹیلی فون پر بات چیت کی ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق بیان میں کہاگیاکہ ظریف نے ہنٹ کو آگاہ کر دیا کہ ایران ہر صورت اپنے تیل کی برآمدات جاری رکھے گا۔ ظریف نے مزید کہا کہ برطانیہ کو تیل بردار جہاز گریس 1 کو جلد آزاد کرنا ہو گا۔

ادھر جیرمی ہنٹ نے ٹویٹر پر بتایا کہ انہوں نے جود ظریف کو آگاہ کر دیا ہے کہ اگر تہران یہ ضمانت پیش کرے کہ تیل بردار جہاز شام نہیں جائے گا، تو برطانیہ اس جہاز کی آزادی کو آسان بنائے گا۔اس سے قبل برطانوی وزیر خارجہ نے بتایا تھا کہ ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے انہیں آگاہ کیا ہے کہ تہران گریس 1 تیل بردار جہاز کا مسئلہ حل کرنے کا خواہاں ہے اور وہ معاملے کو بڑھانا نہیں چاہتا ہے۔

(جاری ہے)

ہنٹ نے واضح کیا کہ اگر انہیں یہ ضمانت مل جائے کہ جبل طارق کی عدالت میں قانونی اقدامات کے بعد مذکورہ تیل بردار جہاز شام کا رخ نہیں کرے گا تو جہاز کی آزادی آسان ہو جائے گی۔ ہنٹ کے مطابق انہوں نے ظریف کے ساتھ بات چیت میں ایرانی وزیر خارجہ کو اس بات کا اطمینان دلایا کہ لندن کے لیے اہم امر گریس 1 تیل بردار جہاز کے تیل کا ذریعہ نہیں بلکہ جہاز کی منزل ہے۔

دوسری جانب ایرانی کی ایک نیوز ایجنسی نے بتایا کہ وزیر خارجہ محمد جواد ظریف اقوام متحدہ میں ایک کانفرنس میں شرکت کے لیے نیویارک روانہ ہو گئے۔ایجنسی کے مطابق ظریف اقوام متحدہ کے زیر انتظام اقتصادی اور سماجی کونسل کے اجلاس میں شرکت کے بعد وینزویلا، بولیویا اور نیکارگوا جائیں گے۔ظریف کا دورہ ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب امریکا اور ایران کے درمیان کشیدگی کی شدت انتہا پر ہے۔