ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز ہسپتال جہلم میں ماہر امراض ڈاکٹرز نے اپنی پرائیویٹ پریکٹس کو بڑھانے کے لیے میڈیکل و ہاوٴس آفیسر ز ڈاکٹرز کے زریعے مریضوں کا علاج شروع کردیا

بدھ ستمبر 17:12

ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز ہسپتال جہلم میں ماہر امراض ڈاکٹرز نے اپنی پرائیویٹ ..
جہلم (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 ستمبر2019ء،نمائندہ خصوصی،طارق مجید کھوکھر) ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز ہسپتال جہلم میں ماہر امراض ڈاکٹرز نے اپنی پرائیویٹ پریکٹس کو بڑھانے کے لیے میڈیکل و ہاوٴس آفیسر ز ڈاکٹرز کے زریعے مریضوں کا علاج شروع کردیا تفصیلات کے مطابق ڈی ایچ کیو ہسپتال میں ڈپٹی کمشنر جہلم محمد سیف انور جپہ ،ایم ایس ڈاکٹر فاروق بنگش نے مریضوں کو طبی سہولیات کی فراہمی کے لیے ایک اچھا اقدام اٹھایا تھا جس سے مریضوں کو ریلیف ملنا شروع ہواجبکہ حکومت پنجاب نے ہسپتال میں تمام ماہر امراض ڈاکٹرز کے ساتھ ساتھ تمام ڈاکٹرز کی حاضری کو یقینی بنانے کے لیے بائیومیٹرک سسٹم کا آغاز کیا تھا جس پر ماہر امراض ڈاکٹرز نے ہسپتال میں بروقت آکر اپنی حاضری کو تو یقینی بنایا لیکن حیران کن بات یہ ہے کہ تمام ماہر امراض ڈاکٹرز کے ڈی ایچ کیو ہسپتال کے ملحقہ جادہ سے ہسپتال تک دونوں اطراف پرائیویٹ کلینک اور لیبارٹریاں ہیں اور ان میں مریضوں کی تعداد کم ہو رہی تھی جس کی وجہ سے تمام ماہر امراض ڈاکٹرز رات گئے تک اپنے پرائیویٹ کلینکاور لیبارٹری پر مریض چیک کرتے ہیں عوامی سماجی حلقوں نے کہا ہے کہ محکمہ انکم ٹیکس روزانہ کی بنیاد پر تمام مریضوں کا ریکارڈچیک کریں اس سے حکومت ماہانہ لاکھوں روپے انکم ٹیکس اکٹھا کرسکتی ہے۔