Live Updates

وزیراعظم پاکستان کا دورہ آزادکشمیر لائق تحسین ہے ،اُس پار کے کشمیری بھائیوں کو ایک اچھا میسج جائے گا‘شیخ عقیل الرحمن ایڈووکیٹ

مقبوضہ کشمیر میں کرفیوکو40دن ہوگئے ہیں اور انسانی ضروریہ اشیاء تمام ختم ہوچکی ہیں ،ادویات ناپید ،بچوں کو دودھ تک میسر نہیں

جمعرات ستمبر 14:02

مظفرآباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - این این آئی۔ 12 ستمبر2019ء) جماعت اسلامی آزادکشمیرکے نائب امیر شیخ عقیل الرحمان ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ وزیراعظم پاکستان کا دورہ آزادکشمیر لائق تحسین ہے ،اُس پار کے کشمیری بھائیوں کو ایک اچھا میسج جائے گا ،اور دنیا کے کونے کونے میں اچھا پیغام جائے گا ،ہمارا مطالبہ ہے یہ ہے کہ یکجہتی کشمیر ،جلسے جلوس،قراردادیں بھی بہت ہم نے پاس کر لی ہیں ،لیکن اس سے مودی ہٹلر کی صحت پر کوئی اثر نہیں پڑا ،اب ضرورت اس بات کی ہے کہ اللہ تعالیٰ کا نام لے کر عملی اقدامات کیے جائیں ،آج کرفیوکو40دن ہوگئے ہیں اور انسانی ضروریہ اشیاء تمام ختم ہوچکی ہیں ،ادویات ناپید ،بچوں کو دودھ تک میسر نہیں ،یہ سلسلہ جاری رہا تو انسانیت کا کوئی بڑا المیہ جنم لے سکتا ہے ،وزیراعظم پاکستان جلسہ عام میں جہاد کشمیر کا اعلان کریں اور افواج پاکستان کو حکم دیا جائے کہ وہ بھارتی افواج کے حصار کو توڑ دے ،اور کشمیریوں کو آزادکروا ،اس کے علاوہ زبانی جمع خرچ اور قراردوں سے کشمیر آزادنہیں ہوگا،کشمیر کی آزادی کا واحد حل جہاد فی سبیل اللہ ہے ،انہوں نے ان خیالات کا اظہار گزشتہ روز صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ،انہوں نے کہا کہ مودی ہٹلر نے کشمیر میں جو مظالم کررکھے ہیں اُن کو دنیا کے سامنے اُجاگر کرنے کی انتہائی ضرورت ہے ،وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے دورہ وجلسہ مظفرآباد آزادکشمیر کا بھرپور خیرمقدم کرتے ہیں۔

(جاری ہے)

وزیر اعظم عمران خان کشمیریوں کی نمائندگی کا حق سفیر کی حیثیت سے ادا کر رہے ہیں ، ہمیں اُس پار کے مظلوم کشمیریوں بھائیوں ،بہنوں ،مائوں اور بزرگ کی مدد کرنی ہے ،اب مسئلہ کشمیر کو پشت بان کرنے کی ضرورت نہیں ہے بلکہ اب اس مسئلہ کو مزید اُجاگر کیا جائے تاکہ مقبوضہ کے مظلوم بھائیوں بہنوں ،مائوں اور بزگوں کو آزادی نصیب ہو سکے ۔وزیراعظم پاکستان کے دورہ مظفرآباد کے موقع پر آزادکشمیر بھر سے جماعت اسلامی کے کارکنان بھی شرکت کریں گے،انہوں نے کہاکہ آج پاکستان کی فوجی وسول قیادت متحد ہوکر ایک ساتھ کھڑی ہے،بہادر وتجربے کار فوجی سپہ سالار جنرل قمر جاوید باجوہ اور جرات مند وزیر اعظم عمران خان کی موجودگی میں بھارت پاکستان کے ساتھ جنگ نہیں کرسکتا، دُنیا پاک بھارت ایٹمی جنگ سے قبل ہوش کے ناخن لے اور کشمیر کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر مودی سرکارکو مجبور کرئے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق حل کرائے ، کشمیریوں کی نسل کشی بند کروائی جائے، وادی کشمیر میں کرفیو کا فوری خاتمہ کرایا جائے،کشمیریوں کو انکا بنیادی حق حق خودارادیت دلایا جائے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کشمیر دنیا کی سب سے بڑی جیل ہے جہاں انسانی حقوق کی پامالیاں جاری ہیں، بھارت کشمیریوں کی نسل کشی کررہا ہے، وہ انسانی حقوق کمیشن میں کشمیریوں کا مقدمہ لے کر آئے ہیں، تحقیقات کے لیے آزاد اور خود مختار کمیشن بنایا جائے۔ کشمیر بھارت کا اندرونی معاملہ نہیں، دنیا کو مسئلے کے حل کے لیے آگے آنا ہو گا۔ بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا دیا ہے۔

بھارت نے 6 ہفتے سے وادی کو محصور کر کے حریت قیادت کو نظربند کر رکھا ہے، کشمیرمیں قبرستان جیسی خاموشی ہے۔انہوں نے مزید کہا بھارت کادعوی غلط ہے کہ کشمیر اس کا اندرونی معاملہ ہے، بھارت کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو دہشت گردی قرار دے کر مسئلے پر پردہ ڈالنا چاہتا ہے، بھارت کشمیریوں کی اکثریت کواقلیت میں بدل رہا ہے، انسانی حقوق کونسل میں کشمیریوں کا مقدمہ لے کر آئے ہیں، بھارت کو عالمی قوانین کی خلاف ورزیوں سے فوری روکا جائے۔ کشمیر میں صحت کی سہولیات کا فقدان ہے۔ ہم چاہتے ہیں بھارت مسائل کو سمجھے اور مقبوضہ کشمیر میں سے کرفیو ہٹائے اور ان عالمی اداروں کی رسائی کو کشمیر میں ممکن بنائے جو کشمیریوں کی مدد کرنا چاہتے ہیں۔
پاکستان کی شہہ رگ، کشمیر سے متعلق تازہ ترین معلومات