امریکہ ،جنرل موٹرز میں 12 سال بعد ہڑتال، 48 ہزار مزدوروں نے کارخانے جام کر دیئے

پیر ستمبر 13:21

امریکہ ،جنرل موٹرز میں 12 سال بعد ہڑتال، 48 ہزار مزدوروں نے کارخانے جام ..
ڈیٹریاٹ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 16 ستمبر2019ء) امریکہ کے بڑے کار ساز ادارے جنرل موٹرز (جی ایم)کے ورکز نے ہڑتال شروع کر دی جس سے شمالی امریکہ میں جی ایم موٹرز کی پیداوار مکمل طور رک گئی ہے۔جی ایم موٹرز میں گزشتہ12سال بعد یونین یونائیٹڈ آٹو ورکرز (یو اے ڈبلیو) کی کال پر ریاست اوہائیو اور مِشی گن میں اسمبلی پلانٹ بند نہ کرنے ،بالخصوصکانٹریکٹ ورکرز کی تنخواہوں اور مراعات میں اضافیکے مطالبات کے ساتھ ہڑتال شروع کی گئی ہے جس میں کم و بیش 48 ہزار ورکرز شریک ہیں۔

صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے یو اے ڈبلیو اور جی ایم کی انتظامیہ کو معاملات جلد سے جلد طے کرنے کی ہدایت کی ہے تاہم ڈیٹریاٹ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یو اے ڈبلیو نائب صدر ٹیری ڈیٹس نے کہا ہے کہ ہم اب معاملے کو ہلکا نہیں لیں گے۔

(جاری ہے)

انھوں نے کہا کہ اسمبلی پلانٹس کو بند کرنا ان ورکرز کے ساتھ دھوکا بازی ہے جنہوں نے کساد بازاری کے دور میں جی ایم کو ایستادہ رکھنے میں کوئی کسر نہ چھوڑی تھی۔

انھوںنے کہاکہ جی ایم کو سمجھنا ہو گا کہ ہم اس کی ضرورت کے وقت اس کے ساتھ تھے اور اب جب جی ایم ریکارڈ منافع لے رہی ہے اس لئے ہم کو بھی ریلیف دینا ہو گا۔جی ایم کے امریکہ میں 12وہیکلز اسمبلی پلانٹس،12انجن ساز اور پاور ٹرین ساز پلانٹس کے علاوہ ایک تعداد میں سٹمپنگ اور دوسرے کارخانے ہیں۔شمالی امریکہ میں جی ایم کے پلانٹ کی پیداوار رکھنے سے میکسیکو اور کینیڈا میں بھی اس کی پیداوار سپلائی چین متاثر ہونے سے رک سکتی ہے۔