Live Updates

بین الاقوامی برادری کو اب روایتی طریقہ کار سے ہٹ کر مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کے خلاف ٹھوس موقف اختیار کرنا ہوگا

مودی سرکار مقبوضہ وادی میں انسانیت کے خلاف جرائم کے ارتکاب اور عالمی قوانین کی خلاف ورزی کی مرتکب ہوئی ہے، پاکستان ہر فورم پر کشمیریوں کیلئے آواز بلند کرتا رہے گا، سینیٹر آغا محمد شاہ زیب درانی کا ینگ پارلیمنٹیرینز فورم کی چھٹی عالمی کانفرنس میں خطاب

پیر ستمبر 15:15

․ اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 16 ستمبر2019ء) سینیٹر آغا محمد شاہ زیب درانی نے کہا ہے کہ بین الاقوامی برادری کو اب روایتی طریقہ کار سے ہٹ کر مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کے خلاف ٹھوس موقف اختیار کرنا ہوگا، مودی سرکار نے مہذب دنیا کی روایات، عالمی قوانین اور انسانی حقوق کے مسلمہ اصولوں کو بالائے طاق رکھتے ہوئے غیر آئینی، غیر قانونی اور غیر اخلاقی اقدام کے ذریعے مقبوضہ کشمیر کی آئینی حیثیت کو تبدیل کیا اور حق خودارادیت کے لئے اٹھائی گئی آواز کو دبانے کی کوشش کی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے پیراگوئے میں منعقدہ بین الپارلیمانی یونین کے ینگ پارلیمنٹیرینز فورم کی چھٹی عالمی کانفرنس میں پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم، انسانی حقوق کی پامالیوں اور کرفیو کے باعث محصور عوام کو درپیش مسائل پر 40 سے زائد رکن ممالک کے 100 سے زائد اراکین پارلیمنٹ اور مندوبین سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

(جاری ہے)

آغا محمد شاہ زیب درانی نے کہا کہ بین الاقوامی برادری کو اب روایتی طریقہ کار سے نکل کر مقبوضہ کشمیر میں ظلم و جبر کے خلاف ٹھوس موقف اختیار کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ وادی میں کرفیو کے باعث خوف کی فضاہے اور عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ سینیٹر آغا شاہ زیب درانی نے شرکاء کو بتایا کہ مقبوضہ وادی میں گزشتہ 40 روز سے کرفیو نافذ ہے اوراس کے باعث عورتیں، بچے اور بوڑھے بُری طرح سے متاثر ہو رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ادویات اور اشیائے خورد و نوش ناپید ہو گئی ہیں۔ سینیٹر درانی نے کہا کہ مودی سرکار مقبوضہ وادی میں انسانیت کے خلاف جرائم کے ارتکاب اور عالمی قوانین کی خلاف ورزی کی مرتکب ہوئی ہے اور پاکستان ہر فورم پر کشمیریوں کیلئے آواز بلند کرتا رہے گا۔ سینیٹر آغا شاہ زیب درانی نے بتایا کہ پاکستان خطے میں امن کے فروغ اور ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا۔

انہوں نے واضح کیاکہ ہم خطے میں امن چاہتے ہیں اور ترقی و خوشحالی پر یقین رکھتے ہیں۔ بین الپارلیمانی یونین کے ساتھ تعلقات کے بارے میں انہوں نے کہا کہ پاکستان اس اہم فورم کے ساتھ ادارہ جاتی تعاون کو انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے اور یہ فورم اہم مسائل کے حل کیلئے تبادلہ خیال کے بہترین مواقع فراہم کرتا ہے۔ فورم کے شرکاء نے مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی مظالم کا سختی سے نوٹس لیتے ہوئے اظہار یکجہتی کے طور پر ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی اور مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کو تشویشناک قرار دیا۔

پیراگوائے میں منعقدہ کانفرنس میں 100 سے زائد مندوبین شریک ہیں۔ خطے کی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے سینیٹر آغا شاہ زیب درانی نے کہا کہ پاکستان خطے کے ممالک کے ساتھ روابط کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ سینیٹر آغا زشاہ زیب درانی نے فورم کے ایک اہم اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ چین ہمارا بااعتماد ساتھی اور اہم شراکت دار ہے اور دونوں ممالک اہم امور پر ایک جیسا نقطہ نظر رکھتے ہیں۔ پاکستان ’’ون چائنہ پالیسی‘‘ پر چین کے نقطہ نظر کی حمایت کرتا ہے اور چین کے ساتھ تعلقات وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ مضبوط سے مضبوط تر ہوئے ہیں۔
تنازعہ مقبوضہ کشمیر کی بھڑکتی ہوئی آگ سے متعلق تازہ ترین معلومات