چین پاکستان آزادانہ تجارتی معاہدہ پر عملدرآمد یکم دسمبر سے ہو گا، ڈیوٹی فری مصنوعات برآمد کی جا سکیں گی، مختلف عالمی کمپنیوں کو قائل کررہے ہیں کہ وہ پاکستان میں دوبارہ آ کر کاروبار کریں

مشیر تجارت عبدالرزاق دائود کا پریس کانفرنس سے خطاب

جمعہ نومبر 20:36

چین پاکستان آزادانہ تجارتی معاہدہ پر عملدرآمد یکم دسمبر سے ہو گا، ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 08 نومبر2019ء) وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت، صنعت و پیداوار اور ٹیکسٹائل انڈسٹری عبدالرزاق دائود نے کہا ہے کہ چین پاکستان آزادانہ تجارتی معاہدہ (ایف ٹی ای) پر عملدرآمد یکم دسمبر سے ہو گا جس سے پاکستان کی چین کیلئے برآمدات میں اضافہ ہو گا، چین نے پاکستان کے ساتھ آزاد تجارت کے معاہدے کو قبل از وقت فعال کرنے کی منظوری دیدی ہے، ڈیوٹی فری مصنوعات برآمد کی جا سکیں گی، مختلف عالمی کمپنیوں کو قائل کررہے ہیں کہ وہ پاکستان میں دوبارہ آ کر کاروبار کریں۔

جمعہ کو یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عبدالرزاق دائود نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور چین کے درمیان آزاد تجارت کے معاہدے پر اپریل میں دستخط ہوئے تھے اور آزاد تجارت کے معاہدے کو فعال ہونے کے لئے ایک سال کا وقت درکار ہوتا ہے تاہم چین نے آزادانہ تجارت کے معاہدے کو قبل از وقت فعال کرنے کی منظوری دیدی ہے، آزادانہ تجارت کا معاہدہ یکم دسمبر سے فعال ہو جائے گا۔

(جاری ہے)

چینی قیادت نے کہا ہے کہ پاکستان کے ساتھ ہمارے خصوصی تعلقات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پیر سے لاہور میں عالمی نمائش شروع ہو رہی ہے جس میں چین کی 36 کمپنیاں بھی شرکت کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ آزادانہ تجارت کے معاہدے سے پاکستان کے کاروباری افراد کے لئے دروازہ کھل گیا ہے اور چین کو ٹیکسٹائل ‘ چمڑے، آلات جراحی، کیمیکلز، ادویات سمیت تمام مصنوعات برآمد کی جا سکتی ہیں اب کاروباری افراد کو اس سے فائدہ اٹھانا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ مختلف عالمی کمپنیوں کو قائل کررہے ہیں کہ وہ دوبارہ پاکستان میں آکر کاروبار کریں، مختلف چینی کمپنیاں کراچی لاہور اور فیصل آباد میں سرمایہ کاری کررہی ہیں،آزادانہ تجارت کے معاہدے کے نتیجہ میں مصنوعات کی ڈیوٹی فری رسائی سے پاکستان کی برآمدات میں بھی اضافہ ہوگا۔انہوں نے کہا کہ آزادانہ تجارتی معاہدہ کے یکم دسمبر سے نفاذ کے بعد چین۔

پاکستان اقتصادی راہداری منصوبہ کو تقویت ملے گی اور دونوں ممالک کی تاجر برادری کے درمیان تعلقات بڑھیں گے۔ انہوں نے کہا کہ شنگھائی میں ہونے والی چائنہ انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو میں پاکستانی برآمد کنندگان کیلئے ایک موقع ہے جس سے پاکستانی مصنوعات کی نہ صرف نمائش کرنے کا موقع ملے گا بلکہ برآمدات میں بھی اضافہ کے امکانات روشن ہیں۔

عبدالرزاق دائود نے کہا کہ انہوں نے چین میں ہونے والی انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو کی افتتاحی تقریب میں شرکت کی جس کا افتتاح چین کے صدر شی جن پنگ نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ میری مختلف بین الاقوامی کمپنیوں کے ساتھ بھی اس موقع پر میٹنگز ہوئی ہیں جن کے مثبت نتائج سامنے آئیں گے، ان کمپنیوں کے نمائندوں کو پاکستان میں بڑھتے ہوئے سرمایہ کاری کے مواقع سے آگاہ کیا گیا ہے، حکومت کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے اور سرمایہ کاروں کو ہر ممکن سہولیات دینے کیلئے پرعزم ہے۔

انہوں نے کہا کہ چائنہ انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو میں 150 ممالک کے تین ہزار سے زائد کاروباری افراد نے شرکت کی ہے۔ اس نمائش میں پاکستان کے 35 برآمدکنندگان نے اپنی مصنوعات کی نمائش اور سٹالز قائم کئے۔ انہوں نے گلوبل تجارتی تعلقات میں حالیہ پیشرفت پر خدشات کا اظہار کیا جو کثیر الجہتی نظام کو خطرہ سے دوچار کر سکتی ہے۔