Live Updates

تحقیقاتی کمیٹی کو انکوائری رپورٹ کیلئے3 ماہ کا وقت دیا ہے، غلام سرورخان

حادثےکی شفاف انکوائری کی جائے گی، گلگت، چترال اور کراچی تینوں حادثات کی رپورٹ پبلک کی جائیں گی، طیارہ بنانے والی کمپنی اور پی آئی اے کے ماہرین سے بھی آزادانہ انکوائری ہوگی۔ وفاقی وزیر ہوا بازی غلام سرور خان کی پریس کانفرنس

sanaullah nagra ثنااللہ ناگرہ ہفتہ مئی 17:08

تحقیقاتی کمیٹی کو انکوائری رپورٹ کیلئے3 ماہ کا وقت دیا ہے، غلام سرورخان
کراچی (اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 23 مئی 2020ء) وفاقی وزیر ہوا بازی غلام سرور خان نے کہا ہے کہ تحقیقاتی کمیٹی کو انکوائری رپورٹ کیلئے3 ماہ کا وقت دیا ہے، حادثے کی شفاف انکوائری کی جائے گی، گلگت، چترال اور کراچی تینوں حادثات کی رپورٹ پبلک کی جائیں گی، طیارہ بنانے والی کمپنی اور پی آئی اے کے ماہرین سے بھی آزادانہ انکوائری ہوگی۔ انہوں نے سی ای او پی آئی اے ارشد ملک کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ طیارے حادثہ اور جانی نقصان پر اظہار افسوس اور غمزدہ خاندانوں سے اظہار تعزیت کرتا ہوں،ریسکیو آپریشن میں حصہ لینے والی ٹیموں کا شکریہ ادا کررہا ہوں۔

لوگوں نے آگ میں کود کر لوگوں کی جانیں بچائیں اور لاشوں کو نکالا، اس جذبے کو سلام کرتا ہوں، تمام ریسکیواداروں ، ٹیموں اور اہل محلہ کوخراج تحسین پیش کرتا ہوں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ اپنی بساط کے مطابق فیملی کی جو مدد کرسکتے ہیں کریں گے، ہم اس جانی نقصان کا مداوہ نہیں کرسکتا ۔10لاکھ امدادی فی فیملی کو دی جائے گی۔ یہ رقم کچھ بھی نہیں ہے۔

جن گھروں پر جہاز تباہ ہوا، ان گھروں کی مرمت ، امداد، گاڑیوں کی امداد دی جائے۔تین حادثے ہوچکے ہیں، گلگت، چترال حویلیاں، اور اب یہ کراچی کا حادثہ ہوا ہے، اگر ان واقعات کی انکوائری رپورٹ نہ ہوسکے، رپورٹ پبلک نہ ہوسکے، تو یہ اداروں کی کمزوری ہے۔ انہوں نے کہا کہ تحقیقات کیلئے مجھ سمیت، سی ای او ، اورایئربس کے ماہرین بھی آزادانہ تحقیقات کا حصہ ہوں گے۔

جس کمپنی نے یہ طیارہ بنایا، جرمنی اور فرانس کی کمپنی کے ماہرین بھی انکوائری میں شامل ہوں گے۔ حادثے کی تحقیقاتی رپورٹ تین ماہ کا وقت دیتا ہوں، مجھ سمیت جو بھی ذمہ دار ہوگا، ان کے خلاف کاروائی کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے پائلٹ نے ایمرجنسی لینڈنگ کا اعلان کیا ہی نہیں، جس کے تحت اقدامات کیے جاتے، بلیک باکس سے جو بھی معلومات اور گفتگو سامنے آئے گی ، اس کو تحقیقات کی جائیں گی۔

اس موقع پر سی ای او پی آئی اے ایئرمارشل ارشد ملک نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ طیارہ حادثے میں سے مسافروں کو نکالنے اورملبے کو ہٹانے کا کام مکمل ہوچکا ہے، تمام میتیں ہسپتال پہنچا دی گئی ہیں۔اب ڈی این اے کیا جا رہا ہے، کراچی یونیورسٹی میں شہداء کے ڈی این اے ہوں گے۔میری ٹیم کا مسافروں کے لواحقین سے رابطہ ہوچکا ہے۔ٹیم میچنگ کرکے میتوں کو ورثاء کے حوالے کرے گی۔

21لاشیں ورثاء کے سپر دکی جاچکی ہیں۔ وفاقی حکومت نے جو ایئرکرافٹ ایکسیڈنٹ تحقیقاتی بورڈ بنایا ہے، مجھ سے جو بھی معلومات اور دستاویزات مانگی جائیں گی، میں وہ فراہم کرنے کا پابند ہوں گا،طیارے کا بلیک باکس تحقیقاتی ٹیم کے حوالے کردیا ہے۔ اس کے علاوہ میں کسی قسم کی انکوائری کا حصہ نہیں ہوں ۔تحقیقات میں ہر ممکن تعاون کروں گا۔جس کو بھی انکوائری کمیٹی نے ذمہ دار ٹھہرایا ،میں خود سمیت سب کو احتساب کے پیش کیا جائے گا۔اب ہم نے متاثرین کو امدادی رقوم دینی ہیں، انسان کے جانی نقصان کا کوئی مداوا نہیں کیا جاسکتا۔
پی آئی اے کی پرواز حادثے کا شکار سے متعلق تازہ ترین معلومات