فیصل آباد،محکمہ زراعت کا شہریوں کو کچن گارڈننگ کے تحت موسم سرما کی سبزیاں کاشت کرنے کا مشورہ

منگل 14 ستمبر 2021 12:46

فیصل آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 14 ستمبر2021ء) محکمہ زراعت نے شہریوں کو کچن گارڈننگ کے تحت موسم سرما کی سبزیاں پھول گوبھی، بند گوبھی، آلو، پیاز، سلاد، مولی، شلجم، مٹر، گاجر، پالک، میتھی، دھنیا، لہسن اور چقندر کاشت کرنے کا مشورہ دیا ہے اور کہا ہے کہ  بڑھتی ہوئی آبادی کی غذائی ضروریات پورا کرنے کیلئے سبزیوں کی اہمیت مسلمہ ہے لیکن پاکستان میں سبزیوں کی فی کس کھپت عالمی معیار سے بہت کم ہے۔

محکمہ کے ترجمان نے بتایا کہ انسانی خوراک میں سبزیوں کا  استعمال 300 سے 350 گرام فی کس روزانہ ہونا چاہیے جبکہ ہمارے ہاں یہ مقدار 100 سے 150 گرام فی کس روزانہ ہے۔انہوں نے کہا کہ کچن گارڈننگ کے تحت اپنے کھیت یا گھر کے باغیچہ میں کاشت کی گئی سبزیاں تازہ، صحت مند، سستی، آلودگی  ، کیمیائی کھادوں اور زہریلی ادویات کے استعمال سے پاک ہوتی ہیں جن کے استعمال سے انسانی صحت پر خوشگوار اثرات مرتب ہوتے ہیں ۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ موسم سرما کی سبزیوں میں پھول گوبھی، بند گوبھی، آلو، پیاز، سلاد، مولی، شلجم، مٹر، گاجر، پالک، میتھی، دھنیا، لہسن اور چقندر شامل ہیں جو ستمبر اکتوبر میں کاشت اور فروری مارچ تک برداشت کے قابل ہوتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ پھول گوبھی، بند گوبھی، بروکلی، پیاز اور سلاد موسم سرما میں بذریعہ پنیری کاشت ہونے والی سبزیاں ہیں جن کے لیے  ایسی جگہ کا انتخاب کیا جائے  جہاں پودے  کو دن میں کم از کم 6گھنٹے سورج کی روشنی  ملے اور اگر  صحن یا باغیچے میں کوئی ایسی جگہ ہے جہاں زیادہ دیر تک سایہ رہتا ہو تو ایسی جگہ پر پتوں والی سبزیاں مثلاً دھنیا، پودینہ، پالک، سلاد وغیرہ کاشت  کیا جائے۔

  انہوں نے کہا کہ کاشت کیلئے منتخب رقبہ کو ناپ لیں تا کہ آپ کو اندازہ ہو سکے کہ رقبہ کیلئے کتنی کھاد اور بیج کی ضرورت ہو گی  جس کےبعد  اپنی ضرورت، پسند اور موسم کو مد نظر رکھتے ہوئے مختلف سبزیوں کیلئے رقبہ مختص کر لیں کیونکہ بعض سبزیاں مثلاً دھنیا، پودینہ کم رقبے سے بھی گھر کی ضرورت پوری کر دیتی ہیں جبکہ دیگر سبزیوں کو زیادہ رقبے کی ضرورت ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کاشت سے قبل کاغذ پر ایک خاکہ بنا کر اس میں منتخب سبزیاں لکھ لیں اسی طرح سے خاکہ میں سبزیوں کی قطاروں، پودوں کا فاصلہ، کھاد کی ضرورت وغیرہ درج کر لیں تا کہ زمین کی تیاری کے وقت دشواری نہ ہو نیز سبزیوں کی قطاروں کا رخ سردیوں میں شمالاً جنوباً رکھیں تا کہ دھوپ زیادہ مقدار میں مل سکے۔انہوں نے کہا کہ سبزیوں کو پالتو جانوروں مثلاً مرغی، خرگوش وغیرہ سے بچانے کیلئے رقبے کے اردگرد حفاظتی باڑ کا انتظام کیا جائے  جبکہ پرندوں مثلاً طوطے، چڑیا وغیرہ سے مٹر اور دیگر سبزیوں کو بچانے کیلئے رقبے میں چمکیلی پٹی باندھنے سے پرندے سبزیوں سے دور رہتے ہیں۔

متعلقہ عنوان :