سعودی عرب نے ایٹم بم بنانے کا اعلان کردیا

ایران جوہری ہتھیار بنائے گا توسعودی عرب پیچھے نہیں رہے گا،عادل الجبیر، حوثی باغیوں کو میزائل فراہمی نا قابل قبول، ایرانی اشتعال انگیز کارروائیاںکشیدگی کا باعث ہیں، سعودی وزیر خارجہ

جمعرات مئی 19:29

ریاض(اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ جمعرات مئی ء)سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر نے کہا ہے کہ ایران جوہری ہتھیار بنائے گا توسعودی عرب بھی بنائے گا،ایران کا حوثی باغیوں کو میزائل فراہم کرنا نا قابل قبول ہے، ایران کی اشتعال انگیز کارروائیاں اور خطے میں مداخلت کشیدگی کا باعث ہے۔امریکی میڈیا کے مطابق ایران یمن میں حوثی باغیوں کو بیلسٹک میزائل مہیا کر رہا ہے، اس کا یہ کردار بالکل ناقابل قبول ہے۔

سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر نے واضح کیا ہے کہ اگر ایرن جوہری ہتھیار بناتا ہے تو پھر ان کا ملک بھی اپنے جوہری ہتھیار بنائے گا۔ امریکی ٹی وی چینلز کے نمائندے نے ان سے یہ سوال پوچھا تھا کہ اگر ایران امریکا کے 2015ء کے جوہری سمجھوتے سے نکلنے کے بعد اپنا جوہری ہتھیاروں کا پروگرام دوبارہ شروع کر دیتا ہے تو کیا الریاض بھی از خود ایک جوہری بم بنائے گا اس کے جواب میں عادل الجبیر نے کہا کہ ’’اگر ایران جوہری صلاحیت حاصل کرتا ہے تو پھر ہم بھی اس صلاحیت کے حصول کے لیے جو بن پڑا، وہ کریں گے‘‘۔

(جاری ہے)

سعودی عرب ماضی میں بھی یہ کہہ چکا ہے کہ ایران جوہری ہتھیاروں کی تیاری کے لیے جو کچھ کرے گا، وہ اس کا مقابلہ کرے گا۔اب وزیر خارجہ عادل الجبیرنے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے جوہری سمجھوتے سے دستبرداری کے اعلان کے ایک روز بعد پھر اس موقف کا اعادہ کردیا ہے۔ایران نے یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کی حمایت بدستور جاری رکھی ہوئی ہے اور وہ سرحد پار سعودی شہروں پر بیلسٹک میزائلوں اور راکٹوں سے حملے کر رہے ہیں۔

سعودی عرب ایران پر یہ الزام عاید کرتا چلا آ رہا ہے کہ وہ یمن میں حوثی باغیوں کو بیلسٹک میزائل مہیا کر رہا ہے۔ ایران کی ان اشتعال انگیز کارروائیوں اور خطے میں مداخلت کی وجہ سے پہلے ہی دونوں ممالک کے درمیان سخت کشیدگی پائی جارہی ہے۔عادل الجبیر نے اس جانب اشارہ کرتے ہوئے سی این این کو بتایا کہ ’’یہ میزائل ایرانی ساختہ ہیں اور حوثیوں کو مہیا کیے جا رہے ہیں۔

اس طرح کا کردار بالکل ناقابل قبول ہے۔ ان بیلسٹک میزائلوں سے اقوام متحدہ کی قراردادوں کی بھی خلاف ورزی ہے۔ ایرانیوں کو اس معاملے میں قابل مواخذہ قرار دیا جانا چاہیے‘‘۔سعودی وزیر خارجہ نے خبردار کیا ہے کہ ’’ہم مناسب طریقے سے اور مناسب وقت پر اس اشتعال انگیزی کا جواب دیں گے۔ فی الوقت ہم ہر قیمت پر ایران کے ساتھ براہ راست فوجی تصادم سے بچنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن ایران کے اس طرح کے کردار کو زیادہ دیر تک برداشت نہیں کیا جا سکتا۔ ایران کا یہ عمل تو سیدھا سیدھا اعلان جنگ ہے اور اس کو یہی سمجھا جانا چاہیے‘‘۔

Your Thoughts and Comments