بھارت؛مسلم نوجوان کی جان بچانے والے سکھ پولیس افسر کو جان سے مارنے کی دھمکیاں

میں نے جو کچھ بھی کیا اپنا فرض نبھایا،جگندیپ

جمعرات مئی 14:08

اتراکھنڈ(اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ جمعرات مئی ء)بھارت میں حال ہی میں مسلم نوجوان کو مشتعل ہجوم سے بچا کر ہیرو بننے والے بھارتی سکھ پولیس اہلکار کو جان سے مارنے کی دھمکیاں ملنے لگ گئیں ہیں ۔بھارت میں مذہبی انتہا پسندی اور عدم برداشت عروج پر ہے اور ہندو شدت پسندوں نے اقلیتوں کیلئے مزید زمین تنگ کردی ہے۔

حال ہی میں شمالی ریاست اتراکھنڈ میں مسلم لڑکے کو مشتعل ہجوم سے بچانے والے سکھ پولیس اہلکار کو جان سے مارنے کی دھمکیاں ملنے لگیں۔ویڈیو سامنے آنے کے بعد جہاں سکھ پولیس اہلکار کی تحسین کی جارہی ہے تو دوسری جانب ہندو انتہا پسند انھیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔سکھ پولیس اہلکار جگندیپ سنگھ کی یہ ویڈیو گزشتہ ہفتے انٹرنیٹ پر وائرل ہوئی تھی،تاہم ان کو جان سے مارنے کی دھمکیاں ملنے کہ بعد حکومت نے انہیں طویل چھٹی پر بھیج دیا ہے۔

(جاری ہے)

اس حوالے سے جگندیپ کا کہنا تھا کہ میں صرف اپنا فرض نبھا رہا تھا،اگر میں وردی میں نہ بھی ہوتا تو بھی میں ایسا ہی کرتا اور ہر انڈین کو یہی کرنا چاہیے۔واضح رہے کہ انتہا پسندوں کے حملے کا شکار ہونے والے مسلم نوجوان پر الزام تھا کہ وہ ہندو لڑکی سے ملنے مندر آیا تھا،جبکہ دوسری جانب عالمی حلقوں کی جانب سے بھی متعدد رپورٹس میں انکشافات کئے جا چکے ہیں کہ بھارت میں اقلیتی برادری کو حقوق نہیں مل رہے۔

متعلقہ عنوان :

Your Thoughts and Comments