واپڈا کے 204 ارب روپے کمپنیوں نے واپس کرنے سے انکار کردیا

ریکوری مقدمات کے خلاف عدالتوں سے حکم امتناعی لے لئے‘ کمپنیوں کو اربوں روپے فائدے دینے والے واپڈا کے کرپٹ عناصر کی نشاندہی کیلئے ممبر پاور تحقیقات شروع نہ کر سکے

پیر جون 22:57

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبار آن لائن۔ پیر جون ء) واپڈا حکام کی بدنیتی اور کرپشن کے باعث 204 ارب روپے کی ریکوری مختلف کمپنیوں سے ممکن نہ ہوسکی۔ کمپنیوں نے واپڈا کے اندر کرپٹ مافیا سے مل کر عدالت سے حکم امتناعی حاصل کرکے اربوں روپے واپڈا کو واپس کرنے سے انکار کردیا۔ کمپنیوں کے پاس 204 ارب جانے کے نتیجہ میں ملک بھر کی مختلف عدالتوں میں 17 مقدمات چل رہے ہیں جن میں واپڈ کے 204 ارب 56 کروڑ روپے کی ریکوری ہونا باقی ہے۔

مختلف عدالتوں میں اربوں روپے کی ریکوری کے مقدمہ کی سماعت میں تاخیر کی سب سے بڑی وجہ واپڈاکے کرپٹ اور بدیانت افسران ہیں جو درپردہ کمپنیوں کے مفادات کا تحفظ کرتے ہیں واپڈا کے جنرل منیجر سینٹرل واٹر کی ناہلی کے باعث 208 ملین روپے مالیت کے مقدمات التواء کا شکار ہیں جبکہ جنرل منیجر پی اینڈ ڈی واپڈا کی نااہلی اور بدیانتی کے باعث 204 ارب روپے پھنس گئے ہیں۔

(جاری ہے)

سرکاری دستاویزات میں انکشاف ہوا ہے کہ عالمی کمپنی ایمزو AMZO اور عالمی کمپنی ہائیڈرو پاور لمیٹڈ نے واپڈا حکام کیخلاف بھی مقدمات قائم کر رکھے ہیں واپڈا میں اربوں روپے کے مقدمات ہیں ریکوری کی تاخیر کے حوالے سے ممبر پاور واپڈا کو ہدات کی گئی تھی کہ وہ اعلیٰ پیمانے پر تحقیقات کریں اور ذمہ دار کرپٹ افسران کی نشاندہی کریں تاہم ایک سال گزرنے کے باوجود ممبر پاور نے ابھی تک اپنی ذمہ داری پوری نہیں کی اور نہ ہی قومی خزانہ کو نقصان پہنچانے والے کرپٹ افسران کی نشاندہی کر سکے۔

Your Thoughts and Comments