نجم سیٹھی پاکستان سپر لیگ کی کامیابی کیلئے پرعزم ، پی ایس ایل دور حاضر کے شاندار ٹورنامنٹ میں سے ایک ہے جس کا موازنہ ماسٹرز چمپیئنز لیگ سے نہیں کیا جاسکتا، نجم سیٹھی ، پی ایس ایل کے میچوں کو دیکھنے کے لیے پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد آئے گی کیونکہ ٹکٹ کی فروخت میں تیزی سے اضافہ ہوا، جنوبی ایشیائی ٹی وی کے نشریاتی حقوق سے انھیں 60 سے 70 فی سرمایہ حاصل ہوگا، دونوں لیگز کے منتظمین کے لیے تماشائیوں کی بڑی تعدا کو میدان تک لے کر آنے میں بڑا چیلنج ہوگا، میڈیا سے گفتگو

ہفتہ جنوری 09:14

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔30جنوری۔2016ء)پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے چیئرمین نجم سیٹھی نے لیگ کی کامیابی کے عزم کا اظہار کر تے ہوئے کہا ہے کہ پی ایس ایل دور حاضر کے شاندار ٹورنامنٹ میں سے ایک ہے جس کا موازنہ ماسٹرز چمپیئنز لیگ (ایم سی ایل) سے نہیں کیا جاسکتا،پی ایس ایل کے کامیاب انعقاد کے لیے تمام تیاریاں مکمل ہوچکی ہیں جبکہ جلد ہی ان تیاریوں کو حتمی شکل دی جائے گی۔

لاہور میں پشاور زلمے کی کٹ کی تقریب رونمائی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے نجم سیٹھی نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں سابق کھلاڑیوں کا ٹورنامنٹ ماسٹرز چمپیئنزلیگ(ایم سی ایل) کے پھیکے آغاز کے حوالے سے کئے گئے سوال پر کہنا تھا کہ "آپ ایم سی ایل کی طرح سابق کھلاڑیوں کی لیگ کو دورحاضر کے کرکٹ اسٹارز سے مزین بڑے ٹورنامنٹ سے موازنہ نہیں کرسکتے"۔

(جاری ہے)

متحدہ عرب امارات کے اخباروں نے ایم سی ایل کی افتتاحی تقریب میں عام لوگوں کی دلچسپی کو مایوس کن قرار دیا۔افتتاحی تقریب گزشہ روز دبئی میں ہوئی جہاں آتش بازی اور ہلا گلا آئی پی ایل اور دیگر لیگ کی طرح کیا گیا لیکن تماشائیوں کی تعداد مایوس کن حد تک کم تھی۔اخباری رپورٹس کے مطابق متحدہ عرب امارات میں جہاں ٹیسٹ کرکٹ دیکھنے لوگوں کی کم تعداد میدان کا رخ کرتی ہے لیکن سابق اسٹارز کی کرکٹ دیکھنے کے لیے اس سے بھی کم تعداد موجود تھی۔

ایم سی ایل میں شائقین کی عدم دلچسپی نے پی ایس ایل کے حکام کی 4 فروری کو لیگ کے آغاز سے قبل آنکھیں کھول دی ہیں اگرچہ پی ایس ایل اور ایم سی ایل کے مقابلے ایک ہی دن متحدہ عرب امارات کے میدانوں میں ہوں گے۔لیکن دونوں لیگ کا کوئی موازنہ نہیں ہے اور جمعرات کو ایم سی ایل میں لوگوں کی عدم دلچسپی کا پی ایس ایل پر کوئی اثر نہیں پڑے گا۔نجم سیٹھی کہتے ہیں کہ "پی ایس ایل کے میچوں کو دیکھنے کے لیے پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد آئے گی کیونکہ ٹکٹ کی فروخت میں تیزی سے اضافہ ہواہے"۔

۔ انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل کے میچوں کو دیکھنے کے لیے پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد آئے گی کیونکہ ٹکٹ کی فروخت میں تیزی سے اضافہ ہوا۔ انہوں نے کہا کہ پی ایس ایل کا سب سے اہم مالی ذریعہ نشریاتی حقوق ہیں جبکہ ایم سی ایل کے منتظمین کا بھی خیال ہے کہ جنوبی ایشیائی ٹی وی کے نشریاتی حقوق سے انھیں 60 سے 70 فی سرمایہ حاصل ہوگا۔تاہم ایم سی ایل کے آغاز سے یوں دیکھائی دے رہاہ ہے کہ دونوں لیگز کے منتظمین کے لیے تماشائیوں کی بڑی تعدا کو میدان تک لے کر آنے میں بڑا چیلنج ہوگا۔

Your Thoughts and Comments