کم وسیلہ یتیم بچی کیلئے 10لاکھ روپے کی مالی امداد کااعلان ،پنجاب حکومت آپ اور آپ کی بہنوں کی ہر ممکن دیکھ بھال کریگی،وزیراعلیٰ پنجاب سے بھکر کی رہائشی یتیم بچی مدثرہ پروین کی ملاقات

وزیراعلیٰ کا ایجوکیٹرکی بھرتی کیلئے تحریری امتحان میں میرٹ پر آنے کے باوجودمدثرہ پروین کاانٹرویو نہ کرنے کاسخت نوٹس سلیکشن کمیٹی کے اراکین کے رویے پر سخت برہمی ، بھکر کے سابق ڈی سی او کو فوری طورپر او ایس ڈی بنانے کا حکم سلیکشن کمیٹی میں شامل ای ڈی او ایجوکیشن سمیت تمام متعلقہ افسران کو فوری طورپر معطل کرنے کا حکم

جمعرات فروری 11:51

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔2فروری۔2017ء ) وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف سے گزشتہ روز یہاں بھکر کی رہائشی یتیم بچی مدثرہ پروین نے ملاقات کی۔وزیراعلیٰ نے ایجوکیٹرکی بھرتی کیلئے تحریری امتحان میں میرٹ پر آنے کے باوجودمدثرہ پروین کا انٹرویو نہ کرنے کاسخت نوٹس لیتے ہوئے بھرتی کیلئے قائم سلیکشن کمیٹی کے اراکین کے رویے پر سخت برہمی کا اظہار کیااور بھکر کے سابق ڈی سی او کو فوری طورپر او ایس ڈی بنانے اورسلیکشن کمیٹی میں شامل ای ڈی او ایجوکیشن سمیت تمام متعلقہ افسران کو فوری طورپر معطل کرنے کا حکم دیا۔

وزیراعلیٰ نے کم وسیلہ یتیم بچی مدثرہ پروین کیلئے 10لاکھ روپے کی مالی امداد کااعلان کیا اور کہا کہ پنجاب حکومت آپ اور آپ کی بہنوں کی ہر ممکن دیکھ بھال کرے گی۔

(جاری ہے)

وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ ایجوکیٹر ز کی بھرتی کے عمل کی سکروٹنی کروائی جائے اوراس ضمن میں فوری طورپر مربوط لائحہ عمل تیار کرکے سکروٹنی کا آغاز کیا جائے۔مدثرہ پروین سمیت دیگر طالبات کے ازسر نو انٹرویوکیے جائیں اورمیرٹ پر فیصلہ کیا جائے ۔

ازسرنوانٹرویوز کیلئے فوری طورپر نئی سلیکشن کمیٹی تشکیل دی جائے ۔انہوں نے کہا کہ بغیر انٹرویو کیے بچی مدثرہ پروین کو کم نمبر دینے کا کوئی جواز نہیں بنتا۔مدثرہ پروین کو انٹرویو کیلئے بلاکرانٹرویونہ کرناافسوسناک امر ہے اوراس ضمن میں سلیکشن کمیٹی نے میرٹ کو پامال کیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ سابق ڈی سی او بھکر کا رویہ آپ کیساتھ کسی طورپر مناسب نہیں تھا۔

آپ کے ساتھ انصاف ہوگااور جنہوں نے کوتاہی ،غفلت اورغیر ذمہ داری کا مظاہرہ کیا ہے ان کیخلاف قواعدوضوابط کے مطابق کارروائی ہوگی۔وزیراعلیٰ نے بچی کو دلاسہ دیتے ہوئے کہا کہ آپ فکرنہ کریں، آپ کو انصاف ہر صورت ملے گااورمیں کسی کو میرٹ سے انحراف نہیں کرنے دوں گا۔انہوں نے کہا کہ میرٹ کو پامال کرنے والے افسروں کو عہدوں پر رہنے کا کوئی حق نہیں۔

طالبہ مدثرہ پروین نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میرے والدین وفات پاچکے ہیں،کوئی بھائی نہیں،ہم تین بہنیں ہیں اورمیں اپنے چچا کے پاس رہتی ہوں۔مجھے انٹرویو کیلئے بلایاگیا لیکن بغیر انٹرویو کے واپس بھجوادیاگیااورسابق ڈی سی او بھکر کے دفتر گئی لیکن انہوں نے بھی مجھے نہیں سنا۔چےئرمین وزیراعلیٰ معائنہ ٹیم نے اس ضمن میں کی جانیوالی تحقیقات کے حوالے سے رپورٹ پیش کی ۔

متعلقہ عنوان :

Your Thoughts and Comments