Jangli Berry - Kayi Amraz Ka Behtareen Elaaj - Article No. 2052

جنگلی بیری۔کئی امراض کا بہترین علاج - تحریر نمبر 2052

پیر جنوری

Jangli Berry - Kayi Amraz Ka Behtareen Elaaj - Article No. 2052
کاشف حسین
پاکستان کے شمالی علاقوں ہنزہ،گلگت،بلتستان اور اسکردو میں پائی جانے والی ایک جھاڑی ”سی بک تھارن“ (Sea buckthorn) نے اپنی طبی افادیت اور حیرت انگیز خصوصیات کی بنا پر دنیا بھر میں مقبولیت حاصل کر لی ہے۔اسے جنگلی بیری بھی کہتے ہیں۔اس جھاڑی میں مفید صحت حیاتین ج (وٹامن سی) اور اومیگا۔7 فیٹی ایسڈ پائے جاتے ہیں،لہٰذا اس میں قوت مدافعت پیدا کرنے کی بھرپور صلاحیت ہوتی ہے ۔

یہ جھاڑی سطح سمندر سے ہزاروں فیٹ کی بلندی پر اُگتی ہے۔یہ معدے کے زخم،جگر کی خرابی،ذیابیطس،ہائی بلڈ پریشر اور دل کے امراض دور کرنے کے لئے دنیا بھر میں مشہور ہے۔چین،بھارت،نیپال اور دیگر ممالک اس جنگلی بیری سے حاصل کردہ تیل،رس اور پتیوں سے دیگر اشیاء تیار کرکے خوب زرمبادلہ کما رہے ہیں۔

(جاری ہے)


کورونا وائرس کی وبا کے دوران اس جنگلی بیری کی مانگ امریکا،یورپ اور دیگر مغربی ممالک میں کئی گنا بڑھ گئی ہے۔

یہ ایک جادو اثر جنگلی بیری ہے۔بلند مقامات پر یہ ایک خودرو پودے کی طرح اُگتی ہے۔ہنزہ،چترال،گلگت،اسکردو اور دیگر شمالی علاقوں کے باشندے اس بیری کے فائدوں سے آگاہ ہیں اور یہ اُن کی روزمرہ غذاؤں کا حصہ ہے۔چونکہ یہ بیری عمر میں بھی اضافہ کرتی ہے،یہی وجہ ہے کہ ان علاقوں کے رہنے والے افراد کی عمریں بھی طویل ہوتی ہیں۔
”سی بک تھارن“ نامی جنگلی بیری میں اومیگا۔

7 فیٹی ایسڈ کی مقدار دوسرے پھلوں اور جڑی بوٹیوں کے مقابلے میں بہت زیادہ ہوتی ہے، جب کہ ترش پھلوں کی نسبت اس میں حیاتین ج کی مقدار 10 گنا زیادہ پائی جاتی ہے۔یہ بیری کئی امراض سے نجات دلانے میں مدد کرتی ہے،مثلاً ذیابیطس،کولیسٹرول،ہائی بلڈ پریشر،ہاضمے کے نظام کی خرابی،آنتوں اور معدے کے زخم،جگر کی خرابی اور بینائی کی کمزوری وغیرہ۔

یہ بیری پاکستان کے شمالی علاقوں کے علاوہ ترکی،آذربائیجان،تاجکستان،افغانستان،آرمینیا،ازبکستان اور چین کے علاقے سنکیانگ میں بھی پائی جاتی ہے،تاہم پاکستانی بیری کے پھل میں دوسرے ملکوں کی بیریوں کے مقابلے میں اومیگا۔7 بہت زیادہ ہوتا ہے،جس کی وجہ سے امریکی تحقیق کار اس میں زیادہ دلچسپی رکھتے ہیں اور اس سے غذائی ضمیمے (فوڈ سپلیمنٹس) اور شربت (سیرپ) بنا کر شہرت اور دولت دونوں حاصل کرنا چاہتے ہیں۔


قدیم زمانے سے پہاڑی علاقوں،خاص طور پر پاکستان کے بلند مقامات پر رہنے والے افراد جنگلی بیری کے پھل اور پودے سے استفادہ کر رہے ہیں۔اس کا پھل،جو بیر کی طرح کا ہوتا ہے،غذائیت سے بھرپور ہوتا ہے اور زمانوں سے پہاڑی علاقوں کے باشندوں کی غذا کا حصہ رہا ہے۔جنگلی بیری کے پھل سے رس تیار کیا جاتا ہے،جو یرقان اور دل کے امراض کے خاتمے کے لئے مفید ہے۔

مقامی باشندے جنگلی بیری کے پودے کی لکڑی جلا کر اس کے دھویں کی دھونی لیتے ہیں،جس سے نزلہ زکام،ہر قسم کی کھانسی اور بلغم جاتا رہتا ہے،جب کہ آنکھوں میں جانے والا دھواں سرمے کا کام دیتا ہے اور اس سے آنکھوں کو فائدہ پہنچتا ہے۔جنگلی بیری سے حاصل کردہ تیل دنیا کے مہنگے ترین تیلوں میں شمار کیا جاتا ہے،لیکن پاکستان میں اس کا تیل کشید نہیں کیا جاتا۔
جنگلی بیری کا پھل قوت مدافعت میں اضافہ کرنے میں لاجواب ہے،اسی لئے یہ کورونا وائرس میں فائدہ مند ہے۔ہنزہ میں جنگلی بیری کی پتیوں سے مزے دار چائے اور اس کے پھل سے جیلی بنائی جاتی ہے،جو بہت ذائقے دار ہوتی ہے۔
تاریخ اشاعت: 2021-01-11

Your Thoughts and Comments