بند کریں
صحت مضامینمضامینجھلسی ہوئی جلد کاعلاج

مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
جھلسی ہوئی جلد کاعلاج
اب پیٹ کے اندر ہوگا
بتول حسین:
انسان کو خدانے اشرف المخلوقات سے بنایا ہے اور اُس نے اپنی عقل اور دماغ کے سہارے خوب ترقی کی ہے اور یہ تسلسل برقرار ہے۔ انسان اپنے ارد گرد گروجو کچھ دیکھتا اور محسوس کرتا ہے وہ اُسے اپنی تحقیق کا حصہ بھی بناتا ہے ۔ مثال کے طور پر کنگروفطری طور پر اپنے نوازئیدہ بچے کو ولادت کے بعد ایک تھیلی میں ڈال کر پرورش کرتے ہیں جو اسی غرض سے مادہ کے پیٹ کے ساتھ لگی ہوتی ہے، جس میں وہ اپنے بچے اٹھانے کے ساتھ لگی ہوتی ہے، جس میں وہ اپنے بچے اٹھاتے پھرتی ہے۔ دراصل کنگروکابچہ انسان کی چھنگلی کے برابر ہوتا ہے اور جب تک چلنے پھرنے کے قابل نہیں ہوجاتا وہیں پڑا دودھ پیتا رہتا ہے اور اس طرح اُس کی نشوونما ہوتی رہتی ہے۔ آج کل جسم کا کوئی عضو متاثر ہونے کی صورت میں اُس عضو کی پیوندکاری کی تکینیک استعمال کی جاتی ہے مگر حال ہی میں برازیل میں ڈاکٹروں نے ایک شخص کو معذور ہونے سے بچانے کے لیے حیرانکن تیکنیک کو آزمایا ہے۔ جنوبی برازیل کے علاقے اور لینزمیں مقیم 42 کارلوس ماریوٹی نامی شخص کے بائیں ہاتھ کی پوری کھال دفتر میں ایک حادثے کے باعث چھل گئی تھی۔ عموماََ ہاتھ کٹ جانے پر اُس کا جرنامشکل ہوتا ہے مگر ڈاکٹروں نے اُسے معذوری سے بچانے کے لیے اُس کا وہ ہاتھ پیٹ کے اندرڈال کرسی دیاتاکہ جلد دوبارہ اُبھر سکے اور مریض ہاتھ سے محروم نہ ہو۔ اب یہ ہاتھ پیٹ کہ اندر نرم ٹشوز کی تھیلی میں چھ ہفتوں تک رہے گا جس کے بعد حالات کا جائزہ لیاجائے گا۔
اس انوکھا آپریشن کرنے والے ڈاکٹڑبورس برنانڈو کے مطابق کارلوس ایسی انجری کا شکار ہوا تھا جس کے باعث اُسکی ہتھیلی اور ہاتھ کی پشت پر کھال ختم ہوگئی تھی جس سے ہڈیاں اور رگیں نظر آنا شروع ہوگئی تھیں۔ اُن کاکہنا تھا کہ یہ بہت بڑی انجری ہے اور ہمیں اس کی بحالی کے لیے واحد طریقہ اسے پیٹ میں ڈال دینا آیاکیونکہ باہر رہنے کی صورت میں انفیکشن کاخطرہ تھا جس کے باعث ہاتھ کا کاٹنا پڑتا۔
اب کارلوس سانتا اوٹیلیاہاسپٹل میں چھ ہفتوں تک مقیم رہیں گے اور وہ خود کو خوش قسمت شخص سمجھتے ہیں ۔ اُن کاکہنا ہے کہ میں اب بھی حادثے کے بارے میں سوچ کر جذباتی ہوجاتا ہوں مگرجب ڈاکٹروں نے مجھے ہاتھ کی محرومی کے بارے میں بتایا اُس وقت مجھے اُس کی سنگینی کااحساس ہوا۔ اب اُس ہاتھ پیٹ پر ایسے ہے جیسے ” جیب میں ڈالا گیا ہو“ اور ڈاکٹروں نے اُسے کہا ہے کہ وہ آہستگی سے اُسے حرکت دیتا رہے تاکہ وہ اکڑ نہ جائے۔ کارلوس کے مطابق اپنے جسم کے اندر انگلیوں کوحرکت دینا بہت عجیب اور خوفناک لگتا ہے۔

(1) ووٹ وصول ہوئے