بند کریں
صحت مضامینمضامینمائیکرویواستعمال کرنے کے نقصانات

مزید مضامین

پچھلے مضامین - مزید مضامین
مائیکرویواستعمال کرنے کے نقصانات
رات کابچا ہواکھانا مائیکرویواوون سے گرم کرنا ایک عام سی بات ہے۔ مائیکرویوطویل عرصے سے گھروں میں استعمال کیاجارہاہے۔ لوگ کھانا پکانے یاکھانا گرم کرنے کے لیے گیس کی چولہے استعمال کرتے ہیں اور مائیکرویوبھی
سعدیہ کامران :
رات کابچا ہواکھانا مائیکرویواوون سے گرم کرنا ایک عام سی بات ہے۔ مائیکرویوطویل عرصے سے گھروں میں استعمال کیاجارہاہے۔ لوگ کھانا پکانے یاکھانا گرم کرنے کے لیے گیس کی چولہے استعمال کرتے ہیں اور مائیکرویوبھی۔ مائیکرویوبجلی سے چلتاہے اور عام چولہاگیس سے۔
حال ہی میں امریکا میں کی گئی ایک تحقیق میں ڈاکٹرمرکولانے انکشاف کیاہے کہ مائیکرویواستعمال کرنا صحت کے لیے نقصان دہ ہے۔ انھوں نے کہاکہ مائیکروویومیں جو حدت پیداہوتی ہے، اس سے غذا کے سالمات (مالیکیولز) میں بہت تبدیلی آجاتی ہے اور اس تبدیلی سے اس کی غذائیت ضائع ہوجاتی ہے۔ انھوں نے مائیکروویواستعمال کرنے والے افراد کومشورہ دیاہے کہ وہ مائیکروویواستعمال کرنے کے بجائے اپنی غذاؤں کوعام چولہے کی ہلکی آنچ پربھاپ میں گلائیں یاتوے پربھون لیں۔ اس صورت میں آپ مائیکروویوسے پہنچنے والے نقصانات سے محفوظ رہیں گے۔
تحقیق کارڈاکٹر لیتالی نے اپنی کتاب میں انکشاف کیاہے کہ مائیکروویوکوجب چلایاجاتاہے تواس میں سے برقی مقناطیسی شعاعیں خارج ہوتی ہیں۔ جب ہم مائیکروویومیں کوئی کھانے کی چیز گرم کرنے یا پکانے کے لیے رکھتے ہیں تویہ برقی مقناطیسی شعاعیں غذامیں شامل ہوجاتی ہیں اور غذامیں ایسے اثرات پیداکردیتی ہیں کہ اسے کھانے سے سرطان ہوسکتاہے۔ مائلروویو میں پکے ہوئے کھانوں کوکھانے سے خون کے سرخ اور سفید خلیات میں کمی ہوجاتی ہے اور یہ کمی اسی برقی مقناطیسی شعاعوں کی وجہ سے ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ ہم پر گہری تھکن طاری ہوسکتی ہے۔ ہمارا سرچکراسکتاہے اور ہمارے دل کی رفتار بھی معمول سے بڑھ سکتی ہے۔
مائیکروویو استعمال کرتے ہوئے ہم یہ کرتے ہیں کہ جب ہمیں کوئی غذاگرم کرنی ہوتی ہے توہم پلاسٹک کے برتن میں ڈال کرمائیکروویومیں رکھ دیتے ہیں، جوایک خطرناک غلطی ہے۔ پلاسٹک کے برتنوں میں ایسے کیمیائی اجزا ہوتے ہیں، جومضرصحت ہوتے ہیں اور یہ اجزااس غذا میں شامل ہوجاتے ہیں، جواس میں گرم کی جاتی ہے۔
اس کے علاوہ پلاسٹک زیادہ گرمی برداشت نہیں کرسکتااور پگھلنے لگتاہے۔
مذکورہ تحقیق کے مطابق پلاسٹک سے خارج ہونے والے ان مضر صحت اجزا کی مقدارجب جسم میں بڑھ جاتی ہے توحساسیت، ہائی بلڈپریشر، دماغی توازن میں خرابی، وزن کابڑھنا اور دل کی بیماریاں گھیرلیتی ہیں۔ اس وجہ سے تحقیق کاروں کامشورہ ہے کہ نہ مائیکروویو میں کھانے پکائے یاگرم کیے جائیں اور نہ اس میں پلاسٹک کابرتن رکھاجائے۔ پلاسٹک کے برتن توویسے بھی استعمال نہیں کرنے چاہییں، کیوں کہ تحقیقات سے ثابت ہوچکا ہے کہ یہ صحت کے لیے مضرہوتے ہیں۔
آیندہ جب آپ کادل چاہ رہاہو کہ گرم گرم پاپ کارن کھائے جائیں یاچاے یاکافی پی جائے تومائیکرو ویواستعمال کرنے کے بجائے گھرمیں موجود عام چولہا استعمال کیجئے۔ چولہے پرپکی ہوئی یاگرم کی ہوئی غذا مضت صحت نہیں ہوتی ہے۔

(0) ووٹ وصول ہوئے