بند کریں
صحت صحت کی خبریںپاکستان میں 44 فیصد بچے خشک دودھ کے استعمال سے سست نشوونما کا شکار ہیں، یونیسف

صحت خبریں

وقت اشاعت: 20/12/2017 - 23:59:12 وقت اشاعت: 20/12/2017 - 16:51:47 وقت اشاعت: 20/12/2017 - 14:28:52 وقت اشاعت: 20/12/2017 - 14:15:34 وقت اشاعت: 20/12/2017 - 12:47:10 وقت اشاعت: 20/12/2017 - 12:10:42 وقت اشاعت: 19/12/2017 - 15:56:17 وقت اشاعت: 19/12/2017 - 15:29:24 وقت اشاعت: 19/12/2017 - 15:02:01 وقت اشاعت: 19/12/2017 - 14:48:35 وقت اشاعت: 19/12/2017 - 13:25:00

پاکستان میں 44 فیصد بچے خشک دودھ کے استعمال سے سست نشوونما کا شکار ہیں، یونیسف

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 20 دسمبر2017ء) اقوام متحدہ کے ادارے یونیسف کی پاکستان میں نمائندہ انجیلاکیرنی نے کہا ہے کہ پاکستان میں 44 فیصد بچے خشک دودھ کے استعمال سے سست نشوونما کا شکار ہیں۔ یہ بات انہوں نے اپنے ایک انٹرویو میں کہی۔ یونیسف کی نمائندہ برائے پاکستان نے کہا کہ مارکیٹنگ کی عالمی عدالت نے دو سال سے کم عمر بچوں کیلئے خشک دودھ کی تشہیر ممنوع کررکھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونیسف بچوں کو ان کی زندگی کے ابتدائی چھ تک ماں کا دودھ پلانے کے رجحان کو فروغ دینے کیلئے پاکستان کی کوششوں کی حمایت کرتا ہے۔ انجیلا کیرنی نے تمام شراکت داروں کی طرف سے مشترکہ کوششوں کی ضرورت پر زور دیا۔
20/12/2017 - 12:10:42 :وقت اشاعت