بند کریں
صحت صحت کی خبریںخیبر پختونخوا میں پولیو کے بعدخسرہ کا مرض سر اٹھانے لگا

صحت خبریں

وقت اشاعت: 24/04/2013 - 21:18:56 وقت اشاعت: 24/04/2013 - 21:18:36 وقت اشاعت: 24/04/2013 - 21:18:36 وقت اشاعت: 24/04/2013 - 14:28:23 وقت اشاعت: 24/04/2013 - 14:27:11 وقت اشاعت: 23/04/2013 - 13:17:11 وقت اشاعت: 22/04/2013 - 21:37:23 وقت اشاعت: 22/04/2013 - 21:36:49 وقت اشاعت: 22/04/2013 - 21:36:18 وقت اشاعت: 22/04/2013 - 21:36:18 وقت اشاعت: 22/04/2013 - 21:33:25

خیبر پختونخوا میں پولیو کے بعدخسرہ کا مرض سر اٹھانے لگا

پشاور(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔آئی این پی۔ 23اپریل 2013ء )خیبر پختونخوا میں پولیو کے بعدخسرہ کا مرض بھی سر اٹھانے لگا۔ طبی ماہرین نے والدین میں حفظان صحت سے متعلق شعور کی کمی کو اس مرض کا سبب قرار دیدیا۔ خیبر پختون خوا میں پولیو پر قابوپانا بھی مشکل دکھائی دے رہا تھا کہ خسرہ کا مرض بھی مختلف اضلاع میں سر اٹھانے لگا ۔محکمہ صحت کے اعدادوشمار کے مطابق خیبر پختونخوا میں رواں سال اب تک دو ہزار سے زیادہ بچوں میں خسرہ کی تصدیق ہوچکی ہے ۔

خسرہ کے حوالے سے پشاور سرفہرست ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق خسرہ ایک متعدی مرض ہے۔ بچے اپنے نازک جسمانی ساخت کی وجہ سے اس وائرس کا آسانی سے شکار ہوجاتے ہیں۔ماہرین کے مطابق اس بیماری کی بروقت تشخیص نہ کی گئی تو یہ جان لیوا بھی ثابت ہو سکتی ہے۔محکمہ صحت حکام کے مطابق بچوں کو خسرہ سے بچاو کا پہلا ٹیکہ نو ماہ میں جبکہ دوسرا پندرہ ماہ کی عمر میں لگایا جاتا ہے۔ یہ ٹیکے لگانے سے بچوں کی قوت مدافعت میں ا ضافہ ہوجاتا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق خسرے پر قابو پانے کے لئے دنیا بھر میں اقدامات کئے جا رہے ہیں تاکہ نہ صرف اس کے پھیلاو کو روکا جا سکے بلکہ قیمتی جانیں بچائی جا سکیں۔
23/04/2013 - 13:17:11 :وقت اشاعت