بند کریں
صحت صحت کی خبریںروس نے پاکستان سے تمام زرعی مصنوعات کی درآمد پر یکم اکتوبر سے غیرمعینہ مدت کیلئے پابندی عائد ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 04/10/2013 - 15:47:45 وقت اشاعت: 04/10/2013 - 15:47:22 وقت اشاعت: 03/10/2013 - 19:59:37 وقت اشاعت: 03/10/2013 - 15:40:06 وقت اشاعت: 02/10/2013 - 21:51:52 وقت اشاعت: 02/10/2013 - 19:38:09 وقت اشاعت: 02/10/2013 - 17:17:02 وقت اشاعت: 02/10/2013 - 14:40:52 وقت اشاعت: 02/10/2013 - 13:28:54 وقت اشاعت: 01/10/2013 - 16:06:07 وقت اشاعت: 01/10/2013 - 16:06:07

روس نے پاکستان سے تمام زرعی مصنوعات کی درآمد پر یکم اکتوبر سے غیرمعینہ مدت کیلئے پابندی عائد کردی ،پاکستان کی جانب سے بین الاقوامی اور روسی قرنطینہ اصولوں کی خلاف ورزی سے روس میں زرعی بیماریاں پھیلنے کا خدشہ ، پاکستانی پھل اور سبزیوں کی 62کروڑ50 لاکھ ڈالر کی برآمدات میں 15 کروڑ سے 17کروڑ ڈالر کمی کا سامنا ہو گا  وحید احمد

ماسکو(اُردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔2اکتوبر۔2013ء)روس نے پاکستان سے تمام زرعی مصنوعات کی درآمد پر یکم اکتوبر سے غیرمعینہ مدت کیلئے پابندی عائد کردی ہے ۔میڈیا رپورٹ کے مطابق روس کی فیڈرل سروس فار ویٹرنری اینڈ فائیٹوسینٹری سرویلینس کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق پاکستان کی جانب سے بین الاقوامی اور روسی قرنطینہ اصولوں کی خلاف ورزی سے روس میں زرعی بیماریاں پھیلنے کا خدشہ ہے جس کی روک تھام کیلئے پاکستان سے ہر قسم کی پلانٹ پراڈکٹس کی درآمد پر عارضی پابندی عائد کردی گئی ہے۔

آل پاکستان فروٹ اینڈ ویجیٹیبل ایکسپورٹرز امپورٹرز اینڈ مرچنٹس ایسوسی ایشن کے سابق چیئرمین وحید احمد کے مطابق روس پاکستانی آلو اور کینو کی بڑی منڈی ہے، روس کو سالانہ 15کروڑ سے 17کروڑ ڈالر کا کینو اورآلو برآمد کیا جاتا ہے، پابندی لگنے سے پاکستانی پھل اور سبزیوں کی 62کروڑ50 لاکھ ڈالر کی برآمدات میں 15 کروڑ سے 17کروڑ ڈالر کمی کا سامنا ہو گا۔

انہوں نے وفاقی وزارت نیشنل فوڈ سیکیورٹی اینڈ ریسرچ اور وزارت تجارت سے مطالبہ کیا ہے کہ فوری طور پر روسی حکام کی جانب سے لگائی گئی پابندی کا نوٹس لیا جائے اور اس مسئلے کو سفارتی سطح پر اٹھاکر پابندی فی الفور ختم کرائی جائے، پاکستان سے کینو کی برآمد کا آغاز یکم دسمبر سے کیا جائے گا جبکہ روس کو آلو کی برآمد جنوری سے شروع ہوگی، پابندی کی اطلاعات کے بعد ایکسپورٹرز میں بے چینی پھیل گئی ہے، حیرت انگیز طور پر پاکستانی قرنطینہ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے ایکسپورٹرز کو اس بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی گئیں ۔
02/10/2013 - 19:38:09 :وقت اشاعت