بند کریں
صحت صحت کی خبریںلائبیریا ، ایبولا سے متاثر 17مریض لاپتہ ہوگئے

صحت خبریں

وقت اشاعت: 18/08/2014 - 17:20:02 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 17:04:14 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 16:20:40 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 14:37:38 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 14:31:17 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 13:56:21 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 12:31:49 وقت اشاعت: 18/08/2014 - 11:49:17 وقت اشاعت: 16/08/2014 - 21:48:09 وقت اشاعت: 16/08/2014 - 19:40:09 وقت اشاعت: 16/08/2014 - 18:16:19

لائبیریا ، ایبولا سے متاثر 17مریض لاپتہ ہوگئے

مونروویا (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔18اگست۔2014ء)لائبیریا میں ایک طبی مرکز پر حملے اور لوٹ مار کے بعد وہاں موجود ایبولا وائرس سے متاثر سترہ مریض لاپتہ ہو گئے ہیں۔ اس واقعے کے بعد دارالحکومت مونروویا میں خوف و ہراس پھیل گیا ہے۔جرمن خبررساں ا دارے کے مطابق مونروویا کے ایک طبی مرکز میں ایبولا کے وائرس سے متاثرہ افراد کو رکھا گیا۔ وہاں گذشتہ رات گئے ڈنڈا بردار نوجوانوں نے حملہ کیا۔

یہ واقعہ دارالحکومت کی ایک کچی بستی ویسٹ پوائنٹ کے ایک کلینک پر پیش آیا۔ اس کی ایک عینی شاہد ربیکا ویسیح نے بتایا: ”انہوں نے دروازے توڑ دیے اور لوٹ مار کی۔ تمام مریض چلے گئے ہیں۔انہوں نے مزید بتایا کہ حملہ آوروں میں بیشتر نوجوان تھے اور انہوں نے لاٹھیاں اٹھا رکھی تھیں جبکہ وہ چیخ چیخ کر کہہ رہے تھے کہ ’ایبولا کا وجود نہیں۔

وزارتِ صحت کے ایک اہلکار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ نوجوان اس طبی مرکز سے دوائیں اور بستر بھی لے گئے ہیں۔ یہ طبی مرکز ایک اسکول میں قائم کیا گیا تھا۔ہیلتھ ورکرز ایسوسی ایشن آف لائبیریا کے سربراہ جارج ولیمز کا کہنا ہے کہ اس طبی مرکز میں انتیس مریض تھے اور تمام میں ایبولا وائرس پائے جانے کی تشخیص ہوئی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ ہسپتال منتقل کیے جانے سے پہلے ان مریضوں کو وہاں ابتدائی طبی امداد دی جا رہی تھی۔

انہوں نے کہاانتیس مریضوں میں سے سترہ گذشتہ رات فرار ہو گئے۔ نو چار روز پہلے انتقال کر گئے تھے جبکہ دیگر تین کو گزشتہ روز ان کے رشتہ دار زبردستی وہاں سے لے گئے۔اس واقعے نے طبی حکام کو درپیش اس چیلنج کو اور بھی واضح کیا ہے کہ وہ ایبولا کی وبا پر کیسے قابو پائیں جو لائبیریا سمیت متاثرہ تین ملکوں میں اب تک ایک ہزار ایک سو پینتالیس افراد کی جان لے چکی ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق متاثرہ ملکوں میں ڈاکٹر اور نرسیں محض اس بیماری کے خلاف ہی نہیں لڑ رہیں بلکہ انہیں مقامی کمیونٹیوں میں پائے جانے والے عدم اعتماد کا کبھی سامنا ہے۔ اس کی وجہ دراصل یہ افواہیں ہیں کہ یہ وائرس مغرب نے بنایا ہے یا پھر اس وائرس کی موجودگی محض ایک ’افواہ‘ ہے۔ایبولا وائرس کسی متاثرہ شخص کے جسمانی مادوں کے ذریعے پھیلتا ہے اور فی الحال اس کا علاج موجود نہیں ہے۔ لائبیریا کے علاوہ سیرا لیون اور گنی میں ہی اس وائرس کے باعث ہلاکتیں ہوئی ہیں جبکہ دیگر افریقی ملکوں میں بھی خوف کی فضا ہے۔ کینیا نے اس تناظر میں متاثرہ ملکوں کے مسافروں کے اپنے ہاں داخلے پر پابندی کا اعلان کیا ہے جس کا اطلاق منگل سے ہو گا۔

18/08/2014 - 13:56:21 :وقت اشاعت