بند کریں
صحت صحت کی خبریںشہریوں کو موسمی امراض سے بچانے کیلئے میڈیکل کے طلبہ و طالبات کی کمیٹیاں تشکیل دینے کا فیصلہ

صحت خبریں

وقت اشاعت: 04/09/2014 - 21:22:47 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 21:15:37 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 20:19:55 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 19:35:09 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 19:01:14 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 16:36:43 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 16:27:05 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 15:12:22 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 15:10:54 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 13:43:53 وقت اشاعت: 04/09/2014 - 13:29:59

شہریوں کو موسمی امراض سے بچانے کیلئے میڈیکل کے طلبہ و طالبات کی کمیٹیاں تشکیل دینے کا فیصلہ

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔4 ستمبر۔2014ء) پرنسپل پوسٹ گریجوایٹ میڈیکل انسٹی ٹیوٹ پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے کہا کہ ڈینگی کے خاتمے کے لیے احتیاطی تدابیر کے علاوہ کوئی چارہ کار نہیں۔ حکومت کے ساتھ ساتھ نوجوان نسل کو آگے آنا چاہیے تاکہ شہریوں میں بیماریوں سے بچاوٴ کے لیے شعور اجاگر کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے حصول کے لئے امیر الدین میڈیکل کالج و نرسنگ سکول جنرل ہسپتال میں سٹوڈنٹس کمیٹیاں قائم کی جائیں گی- ان کمیٹیوں میں شامل میڈیکل کے طلباء و طالبات گلی محلوں کی سطح پر عوام کو ڈینگی اور دیگر بیماریوں کے خلاف حفاظتی تدابیر اختیار کرنے کی تربیت دیں گے - انہوں نے کہا کہ جب تک معاشرے کا ہر فرد اس مہم میں اپنا موثر کردار ادا نہیں کرے گا، اس وقت تک ان بیماریو ں پر قابو پانا ممکن نہیں - پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے کہا کہ حکومت پنجاب نے خادم اعلی محمد شہباز شریف کی ولولہ انگیز اور متحرک قیادت میں جس طرح پچھلے برسوں میں ڈینگی کو شکست دے کر پوری دنیا کو حیران کیا ہے اگر اس وباکے خلاف اسی تندہی سے کام جاری رکھا جائے تو آئندہ برسوں میں اس کا مکمل خاتمہ ہو جائے گا - پرنسپل پی جی ایم آئی نے کہا کہ شہریوں کو چاہیے کہ وہ جس طرح سیر و تفریح کو اپنے معمولات میں شامل کرتے اسی طرح اپنے ارد گرد کے ماحول کو صاف رکھنے کے لئے بھی وقت نکالیں خصوصا اپنے گھرو ں، گلی محلوں میں کسی صورت پانی و کوڑا کرکٹ جمع نہ ہونے دیں تا کہ ڈینگی لاروا پرورش نہ پا سکے -پروفیسر انجم حبیب نے طب سے وابستہ افراد پر زور دیا کہ وہ عوام کو موسمی امراض سے بچاؤ اور حفظان صحت کے اصولوں بارے آگاہ کریں تا کہ لوگ ان بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں- انہوں نے کہا کہ مردوں کے مقابلے میں خواتین کا کردار نہایت اہمیت کا حامل ہے۔

ان کے تمام شعبوں میں خواتین کی نمائندگی بہت زیادہ ہے۔

04/09/2014 - 16:36:43 :وقت اشاعت