بند کریں
صحت صحت کی خبریںپاکستان میں مالیاتی خدمات کا دائرہ وسیع کرنے کے لیے کوششیں تیز کرنا ہو ں گی،آئی ایم ایف،دوردراز ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 22/09/2014 - 14:38:22 وقت اشاعت: 22/09/2014 - 13:29:58 وقت اشاعت: 22/09/2014 - 13:29:58 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 21:43:36 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 21:43:36 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 18:56:34 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 16:47:52 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 15:36:32 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 15:26:48 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 14:55:16 وقت اشاعت: 21/09/2014 - 14:43:50

پاکستان میں مالیاتی خدمات کا دائرہ وسیع کرنے کے لیے کوششیں تیز کرنا ہو ں گی،آئی ایم ایف،دوردراز علاقوں میں بینکاری کی سہولت پہنچاتے کرمالی خدمات سے محروم طبقے کو خدمات کے دائرے میں شاملک کرنا ضروری ہے؛ دنیا کے 189 ممالک میں مالیاتی خدمات تک رسائی بارے فنانشل ایکسس سروے رپوٹ

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔21ستمبر۔2014ء)پاکستان میں مالیاتی خدمات کا دائرہ وسیع کرنے کے لیے ابھی بہت سفر طے کرنا باقی ہے بالخصوص دور دراز علاقوں میں بینکاری کی سہولت پہنچاتے ہوئے مالی خدمات سے محروم طبقے کو مالی خدمات کے دائرے میں شامل کرنے کے لیے کوششوں کو تیز کرنا ہوگا۔آئی ایم ایف کی جانب سے دنیا کے 189 ممالک میں مالیاتی خدمات تک رسائی کے حوالے سے جاری کی جانے والی ’فنانشل ایکسس سروے رپورٹ‘ کے اعدادوشمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان میں گزشتہ 10 سال کے دوران مالیاتی نظام کا دائرہ کافی حد تک وسیع ہوا ہے تاہم اب بھی آبادی کا بڑا حصہ مالیاتی خدمات سے محروم ہے۔

رپورٹ کے اعدادوشمار کے مطابق 2004 تک 1 لاکھ بالغ آبادی کے لیے کمرشل بینکوں کی 7.46 برانچیں موجود تھیں یہ تعداد 2013 تک بڑھ کر 9.33 برانچوں تک پہنچ سکی۔برانچوں کی تعداد کے لحاظ سے بھارت اور بنگلہ دیش پاکستان سے آگے ہیں، بھارت میں ہر 1لاکھ کی آبادی کے لیے بینکوں کی 12.16جبکہ بنگلہ دیش میں 8.19 شاخیں کام کررہی ہیں، پاکستان میں کمرشل بینکوں کے کھاتوں میں ہر 1 ہزار میں سے 316 پاکستانیوں کا ڈپازٹ اکاوٴنٹ ہے، بھارت میں یہ تعداد کہیں زیادہ ہے، پاکستان میں ہر 1 ہزار افراد میں سے 28 نے کمرشل بینکوں میں لون اکاوٴنٹ کھولے ہوئے ہیں جبکہ بھارت میں یہ تناسب 147 تک پہنچ چکا ہے۔

پاکستان میں 2004 تک ہر 1 لاکھ افراد کے لیے 0.73 اے ٹی ایم دستیاب تھیں، 2013 تک یہ تناسب 27.48 فیصد سالانہ کی رفتار سے بڑھ کر 6.49 اے ٹی ایم تک پہنچ گیا، بھارت میں ہر 1 لاکھ کی آبادی کے لیے 13.27 جبکہ بنگلہ دیش میں 2013 تک 6.33 اے ٹی ایم تک پہنچ چکی ہے، پاکستان میں ڈپازٹ اکاوٴنٹس کی تعداد میں سالانہ 8.04 فیصد اضافہ ہورہا ہے،بھارت میں ہر 1 ہزار کھاتے داروں کے پاس اوسطا 197.57 جبکہ بنگلہ دیش میں ہر 1 ہزار کھاتے داروں میں سے 610.61 کے پاس ڈپازٹ اکاوٴنٹ کی سہولت موجود ہے، کمرشل بینکوں سے حاصل کردہ واجب قرضوں کا جی ڈی پی سے تناسب 2013 تک 18.28 فیصد تک پہنچ گیا، اس کے مقابلے میں بھارت میں یہ تناسب 55.14 فیصد ہے، گزشتہ 10 سال کے دوران بھارت میں آؤٹ اسٹینڈنگ قرضوں کا جی ڈی پی سے تناسب اسی سطح کے آس پاس رہا ہے۔

21/09/2014 - 18:56:34 :وقت اشاعت