بند کریں
صحت صحت کی خبریںسندھ ہائی کورٹ نے کچی شراب پینے سے ہونے والی ہلاکتوں پر آئی جی سندھ ، صوبائی سیکرٹری صحت اور ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 14/10/2014 - 16:16:32 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 16:15:09 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 15:58:09 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 15:58:09 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 15:13:26 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 15:11:35 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 14:24:20 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 14:24:20 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 14:14:05 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 13:26:43 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 13:11:39

سندھ ہائی کورٹ نے کچی شراب پینے سے ہونے والی ہلاکتوں پر آئی جی سندھ ، صوبائی سیکرٹری صحت اور ایکسائز سے جواب طلب کرلیا

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔14 اکتوبر۔2014ء) سندھ ہائی کورٹ نے گذشتہ ہفتے کچی شراب پینے سے ہونے والی ہلاکتوں پر آئی جی سندھ ، صوبائی سیکرٹری صحت اور ایکسائز سے جواب طلب کرلیا ہے۔سندھ ہائی کورٹ میں کچی شراب پینے سے ہونے والی ہلاکتوں سے متعلق درخواست کی سماعت ہوئی، سماعت کے دوران درخواست گزار رانا فضل الحسن نے موٴقف اختیار کیا کہ حکومت تاحال صوبے میں کچی شراب کی فروخت پرپابندی لگانے میں ناکام رہی ہے۔

جس کی وجہ سے گزشتہ دنوں کئی افراد زندگی کی بازی ہار گئے ، عدالت سے استدعاء ہے کہ اس کے ذمہ داروں کا تعین کرکے انہیں کیفر کردار تک پہنچایا جائے، دلائل سننے کے بعد عدالت عالیہ نے آئی جی سندھ، صوبائی سیکرٹری صحت اور سیکریٹری ایکسائز کو نوٹس جاری کرتے ہوئے انہیں 19 نومبر تک جواب داخل کرنے کا حکم دے دیا۔واضح رہے کہ گذشتہ ایک ماہ کے دوران کچی شراب پینے سے کراچی میں 32 جبکہ حیدرآباد سمیت اندرونِ سندھ میں 36 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

14/10/2014 - 15:11:35 :وقت اشاعت