بند کریں
صحت صحت کی خبریںپولیوکے 96 فیصد کیس پشتون آبادیوں میں سامنے آئے‘رپورٹ

صحت خبریں

وقت اشاعت: 15/10/2014 - 17:42:27 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 17:17:01 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 16:16:04 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 15:39:05 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 14:56:38 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 14:16:01 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 12:18:34 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 12:06:40 وقت اشاعت: 15/10/2014 - 11:50:17 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 21:56:49 وقت اشاعت: 14/10/2014 - 20:56:46

پولیوکے 96 فیصد کیس پشتون آبادیوں میں سامنے آئے‘رپورٹ

پشاور (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔15 اکتوبر۔2014ء)پاکستان میں پولیو کیسز کی تعداد پچھلے سال کی نسبت 4گناہ ہوگئی ہے، ملک بھر میں سامنے آنے والی کیسز مں 96فیصد کا تعلق پشتون آبادی ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق شمالی وزیرستان اورخیبر ایجنسی میں رہنے والے قبائل میں شرح سب سے زیادہ ہے۔پاکستان میں اب تک پولیو کیسز کی تعداد 207 سے تجاوز کر گئی ہے ‘ شمالی وزیرستان کے وزیر قبائل میں یہ شرح سب سے زیادہ 34فیصد ہے، داوڑ قبائل میں 27فیصد اور آفریدی قبائل میں 26فیصد ہے۔

اعداد وشمار کے مطابق بنوسی قبائل میں پولیو کی شرح 8فیصد، مہمند میں 4فیصد اور سلیمان خیل میں ایک فیصد ہے۔سرکاری طور پر بھی حکام تصدیق کرتے ہیں کہ بعض علاقوں میں حالات زیادہ خراب ہوتے جارہے ہیں۔ سرکاری اعداد وشمار کے مطابق قبائلی علاقے اور خیبر پختونخوا پولیو کے اعتبارسے سرفہرست ہیں۔متاثرہ بچوں میں 82فیصد 2سال سے کم عمر ہیں جبکہ پشتون آبادی میں اس کی شرح 91سے بڑھ کر 96فیصد تک پہنچ گئی ہے۔

سال 2014میں سامنے آنے والے کیسز میں 53فیصد بچے اور 47فیصد بچیاں متاثر ہوئی ہیں۔حکام کے بقول امن وامان کی ابتر صورت حال اور رسائی نہ ہونے کے باعث پولیو کیسز میں اضافہ ہوا ہے۔دوسری طرف شمالی وزیرستان کے قبائل کا کہنا ہے کہ طالبان کی دھماکو ں اور پولیو ٹیموں کی ان تک رسائی نہ ہونے کے باعث اکثریتی آبادی میں بچے پولیو قطروں سے محروم رہے ہیں۔

15/10/2014 - 14:16:01 :وقت اشاعت