بند کریں
صحت صحت کی خبریںعالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں واضح کمی کے بعد آئندہ ماہ کیلئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 26/11/2014 - 22:20:14 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 21:56:26 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 21:15:49 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 21:13:41 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 20:19:20 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 20:17:18 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 20:10:53 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 20:07:04 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 20:05:52 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 19:55:18 وقت اشاعت: 26/11/2014 - 19:52:36

عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں واضح کمی کے بعد آئندہ ماہ کیلئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10روپے لیٹر کمی کی جائے، پاکستان میں کاروبار کیلئے مقابلے کی فضاء پیدا کرنے کیلئے مسابقتی کمیشن آف پاکستان کے اختیارات میں اضافے کیلئے قانون سازی کی جائے تا کہ مختلف شعبوں میں بڑھتی ہوئی اجارہ داریوں اور کارٹلائزیشن کی روک تھام کرکے خلاف ورزی کرنے والی کمپنیوں و افراد کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جا سکے،سیمنٹ ،ڈیری مصنوعات، کھاد اور شوگر انڈسٹری سمیت پاکستان کی 80فیصد صنعت کارٹلائزیشن پر چل رہی ہے،

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کی حکومت کو سفارشات اور ہدایات، , ہمارے فیصلوں کے خلاف اعلیٰ عدالتوں میں 300 مقدمات چل رہے ہیں، مسابقتی کمیشن اپنے فیصلوں پر عملدرآمد کرانے کے اختیارات نہیں رکھتا، چیئرمین مسابقتی کمیشن ڈاکٹر جوزف ولسن کی کمیٹی کو بریفنگ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تاز ترین اخبار۔ 26نومبر 2014ء) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے حکومت کو ہدایت کی ہے کہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں واضح کمی کے بعد آئندہ ماہ کیلئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10روپے لیٹر کمی کی جائے، پاکستان میں کاروبار کیلئے مقابلے کی فضاء پیدا کرنے کیلئے مسابقتی کمیشن آف پاکستان کے اختیارات میں اضافے کیلئے قانون سازی کی جائے تا کہ مختلف شعبوں میں بڑھتی ہوئی اجارہ داریوں اور کارٹلائزیشن کی روک تھام کرکے خلاف ورزی کرنے والی کمپنیوں و افراد کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جا سکے، قائمہ کمیٹی نے کہا کہ سیمنٹ ،ڈیری مصنوعات، کھاد اور شوگر انڈسٹری سمیت پاکستان کی 80فیصد صنعت کارٹلائزیشن پر چل رہی ہے، چیئرمین مسابقتی کمیشن ڈاکٹر جوزف ولسن نے کہا کہ ہمارے فیصلوں کے خلاف اعلیٰ عدالتوں میں 300 مقدمات چل رہے ہیں، مسابقتی کمیشن اپنے فیصلوں پر عملدرآمد کرانے کے اختیارات نہیں رکھتا۔

بدھ کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ، ریونیو، اقتصادی امور، شماریات و نجکاری کا اجلاس قائمقام چیئرمین عثمان سیف اللہ کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا، جس میں مسابقتی کمیشن آف پاکستان کے چیئرمین ڈاکٹر جوزف و دیگر حکام نے کمیشن کی کارکردگیبارے رپورٹ پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ کمیشن نے گزشتہ چند سال کے دوران متعدد شکایات پر انکوائریاں مکمل کر لی ہیں جبکہ بعض کیسوں کے فیصلے بھی سنائے اور کھاد فیکٹریوں سمیت متعدد شعبوں پر بھاری جرمانے عائد کئے لیکن صنعتی مالکان نے مسابقتی کمیشن کے فیصلوں کے خلاف سٹے آرڈر لے لئے جس کی وجہ سے ان فیصلوں پر عملدرآمد نہیں ہو پایا۔

انہوں نے کہا کہ بعض نامور وکلاء نے پنجاب ہائی کورٹ میں مسابقتی کمیشن کی قانونی حیثیت کو بھی چیلنج کر رکھا ہے، جس کی وجہ سے ہمارے لئے کام کرنا مشکل ہو گیا ہے۔ چیئرمین عثمان سیف اللہ کا کہنا تھا کہ بالخصوص سیمنٹ فیکٹریاں یہاں پانی بھرپور استعداد کے مطابق نہیں چل رہیں بلکہ قیمتوں میں اضافے کے لئے پیداوار کم کر دی ہے، اس کے علاوہ ڈیری مصنوعات کا شعبہ مسابقتی کمیشن کی توجہ کا متقاضی ہے، پاکستان دودھ کی پیداوار کے حوالے سے دنیا کا پانچواں بڑا ملک ہے جبکہ یہاں دودھ کی قیمتیں امریکہ سے بھی زیادہ ہیں، مسابقتی کمیشن کو اس معاملے کی انکوائری کرنی چاہیے، اس کے علاوہ انہوں نے شوگر اور کھاد انڈسٹری میں بھی اجارہ داریوں اور کارٹلائزیشن کی تحقیقات کرنے کی ہدایت کی۔

مسلم لیگ(ق) کے سربراہ سینیٹر چوہدری شجاعت حسین نے کہا کہ مسابقتی کمیشن کبھی اجارہ داریوں کو روکنے کیلئے ایک موثر ادارہ ہوا کرتا تھا لیکن اب اس کی کارکردگی مایوس کن ہے۔ پیپلز پارٹی کی سینیٹر صغریٰ امام کا کہنا تھا کہ پاکستان میں 80فیصد انڈسٹری کارٹلائزیشن پر چل رہی ہے۔ جے یو آئی (ف) کے سینیٹر طلحہ محمود نے کہا کہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں واضح کمی ہوئی ہے۔

جس پر قائمہ کمیٹی نے حکومت کو ہدایات جاری کیں کہ آئندہ ماہ کیلئے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10روپے فی لیٹر کے حساب سے کمی کی جائے جبکہ پارلیمنٹ میں قانون سازی کے مسابقتی کمیشن آف پاکستان کے اختیارات میں اضافہ کیا جائے تا کہ ملک میں بڑھتی ہوئی اجارہ داریوں اور کارٹلائزیشن کی روک تھام کی جائے اور خلاف ورزی کرنے والی کمپنیوں و افراد کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے

26/11/2014 - 20:17:18 :وقت اشاعت