بند کریں
صحت صحت کی خبریں خواتین کی معاشرتی، سیاسی اور سماجی شعبوں میں بھرپور شرکت کے بغیر ترقی کا سفر ممکن نہیں،وزیراعلیٰ ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 10/01/2015 - 22:54:12 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 22:34:18 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 22:34:18 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 22:22:18 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:54:18 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:28:21 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:22:08 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:22:08 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:13:42 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 21:04:51 وقت اشاعت: 10/01/2015 - 20:18:23

خواتین کی معاشرتی، سیاسی اور سماجی شعبوں میں بھرپور شرکت کے بغیر ترقی کا سفر ممکن نہیں،وزیراعلیٰ بلوچستان،

بلوچستان کو تعلیم اور صحت کے شعبوں کی بہتری کے لئے انقلابی اقدامات کی ضرورت ہے، ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔10جنوری2015ء )وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہا ہے کہ خواتین کی بھرپور شرکت کے بغیر کوئی بھی معاشرہ ترقی نہیں کرسکتا۔ پارٹی کو تقرریوں اور تبادلوں کی بجائے بلوچستان کو تعلیم اور صحت کے شعبوں کی بہتری کے لئے انقلابی اقدامات کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیشنل پارٹی خواتین کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہا کہ نیشنل پارٹی کو اس کی خواتین ونگ ہی دوسری جماعتوں سے ممتاز بناتی ہے اور ترقیافتہ دنیا کا یہ مسلمہ اصول ہے کہ خواتین کی معاشرتی، سیاسی اور سماجی شعبوں میں بھرپور شرکت کے بغیر ترقی کا سفر ممکن نہیں۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو مطمئن نہ کرنے کے باعث ملک اور بلوچستان میں جمہوریت بدنام ہوئی ہے۔ نیشنل پارٹی کو عوام کی ترقی وخوشحالی، فلاح وبہبود کے لئے بہتر نتائج دینے ہوں گے۔

کارکن تقرریوں اورتبادلوں میں خود کو نہ الجھائیں بلکہ پارٹی کو تعلیم وصحت، بیروزگاری کے خاتمے اور عوام کی مشکلات ومصائب کم کرنے کے لئے پالیسی دیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان میں پیدائش کے دوران زچہ وبچہ کی شرح اموات انتہائی خطرناک حد تک زیادہ ہے۔ بلوچستان میں ایک ہزار سے زائد ویکسینٹر گھر بیٹھے تنخواہیں وصول کرتے ہیں جبکہ ہمارے بچے خسرہ کے وباء کے باعث موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔

اگر مذکورہ ویکسینیٹر اپنے فرائض درست انجام دیں تو بلوچستان میں 98% بچوں کو ٹیکہ جات لگائے جاسکتے ہیں ۔ وزیراعلیٰ نے زور دیا کہ پارٹی کے کارکن عوام کو متحرک کرکے تعلیم اور صحت کے شعبوں میں بہتری کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔ محکمہ صحت اور تعلیم میں غیرحاضر اسٹاف کی نشاندہی کریں۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت جلد بلوچستان میں اسکول بھروتحریک کا آغاز کرے گی۔

ہماری خواہش ہے کہ ایک بچہ بھی اسکول سے باہر نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ اسکول میں اساتذہ کی حاضری کو یقینی بنانے کے لئے جدید نظام کوئٹہ سے متعارف کروایا گیا ہے اس کا دائرہ پورے صوبے تک بڑھایا جائے گا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ خواتین کی نظریاتی وشعوری لحاظ سے تربیتی نشستوں کا بھی انعقاد کیا جائے جبکہ خواتین کی رکن سازی پر بھی خصوصی توجہ دی جائے۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نیشنل پارٹی کے مرکزی نائب صدر میرطاہر زنجونے کہا کہ مرد اور عورت میں سے کسی کا برتر اور کم تر کا فلسفہ کسی بھی لحاظ سے درست نہیں۔عورتوں میں صلاحیتوں کی کوئی کمی نہیں جب سماج بدلتا ہے تو انسان بھی تبدیل ہوتا ہے اور اسی طرح مرد کے بدلنے سے عورت پر بھی اس کے اثرات پڑتے ہیں عالمگیر تبدیلی کے طوفان نے انسان کی سوچ کو بدل دیا ہے۔

طاہر بزنجو نے کہا کہ بلوچ معاشرہ ہمیشہ سے لبرل رہا ہے یہاں خواتین پر تیزاب پھینکنے یا جبری نکاح کا کوئی سوچ بھی نہیں سکتا۔ ہمارے معاشرے میں انتہا پسندی اور شدت پسندی کا کوئی تصور نہیں تھا۔ یہ سب کچھ ایک ایجنڈے کے تحت ہم پر مسلط کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ کانفرنس سے رکن صوبائی اسمبلی ونیشنل پارٹی کی مرکزی سیکرٹری خواتین ونگ ڈاکٹر شمع اسحاق بلوچ، رکن صوبائی اسمبلی یاسمین لہڑی نے بھی خطاب کیا۔ کانفرنس میں 28اضلاع کی خواتین سیکریٹریز نے اپنے اپنے اضلاع کی رپورٹ پیش کی جبکہ کانفرنس میں چار سو سے زائد خواتین مندوبین شریک تھیں۔

10/01/2015 - 21:28:21 :وقت اشاعت