بند کریں
صحت صحت کی خبریںعوام میں تمباکو نوشی کے خلاف بھی شعور بیدار کرنے کی ضرورت ہے ہر سال لاکھوں افراد سگریٹ نوشی ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 26/02/2015 - 13:14:16 وقت اشاعت: 26/02/2015 - 11:15:44 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 23:24:14 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 23:24:14 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 23:14:31 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 23:00:31 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 22:44:23 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 22:41:01 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 22:36:29 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 22:07:26 وقت اشاعت: 25/02/2015 - 19:30:41

عوام میں تمباکو نوشی کے خلاف بھی شعور بیدار کرنے کی ضرورت ہے ہر سال لاکھوں افراد سگریٹ نوشی کے باعث چیسٹ کینسر کا شکار ہو کر موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں،

صوبائی وزیر خزانہ مجتبیٰ شجاع الرحمن کی ڈاکٹرزکے وفد سے ملاقات میں گفتگو

لاہور(اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار. 25 فروری 2015ء)وزیرقانون، ایکسائز و ٹیکسیشن ، خزانہ پنجاب مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا ہے کہ عوام میں تمباکو نوشی کے خلاف بھی شعور بیدار کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ ہر سال لاکھوں افراد سگریٹ نوشی کے باعث چیسٹ کینسر کا شکار ہو کر موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں اور 600ملین لوگ تمباکو نوشی کی پیچیدگیوں کے باعث ٹی بی و پھیپھٹروں کی خطرناک بیماریوں سے متاثر ہیں ،حکومت عوام کو پیچیدہ بیماریوں کے موثر علاج کے لئے وسائل کی ری جنریشن کے ذریعے سٹیٹ آف دی آرٹ طبی سہولتیں مہیا کررہی ہے،کینسر جیسی مہلک بیماریوں کے علاج معالجہ کے لئے سرکاری ہسپتالوں میں شعبہ کینسر کو اپ گریڈکیاجا رہا ہے ۔

تمباکو نوشی کے خاتمے کے عالمی دن کے حوالے سے عوامی وفود اور ڈاکٹرزکے وفود سے ملاقات کے دوران مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ ٹیچنگ ہسپتالوں میں جدید تشخیصی آلات فراہم کئے جا رہے ہیں اور میمو گرافی مشینیں فراہم کر دی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ دنیا میں سالانہ ایک کروڑ27 لاکھ سے زائد افراد کینسر کے موذی مرض میں مبتلا ہوتے ہیں جن میں سے ہر سال 81 لاکھ افراد زندگی کی بازی ہار جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ طبی ماہرین کے مطابق صرف پاکستانی خواتین میں سالانہ 90 ہزار سے زیادہ کینسر کے کیس رپورٹ ہوتے ہیں جبکہ حکومت نے جناح ہسپتال ،الائیڈ ہسپتال ودیگر ٹیچنگ ہسپتالوں میں کینسر کے علاج کے لئے جدید مشینیں نصب کر دی ہیں ۔مجتبیٰ شجاع الرحمن نے ڈاکٹرز سے کہاکہ وہ عوام کو علاج معالجہ کی سہولتیں فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ ان میں احتیاطی تدابیر بارے شعور اجاگر کریں اور اس کے لیے موثر مہم شروع کی جائے کیونکہ کینسر جیسی مہلک بیماریوں کا علاج انتہائی مہنگا ہے۔

انہوں نے کہا کہ امراض گردہ میں مبتلاغریب مریضوں کو مفت ڈائیلاسسز وادویات کے لئے گزشتہ سال کے مقابلے میں دوگنے فنڈز 60 کروڑ روپے جاری کئے گئے ہیں اور کم وسائل رکھنے والے لوگوں کوتشخیص وادویات کی فراہمی کے لئے 8 ارب 75 کروڑ روپے خرچ کئے جارہے ہیں۔

25/02/2015 - 23:00:31 :وقت اشاعت