بند کریں
صحت صحت کی خبریںصوبائی حکومت نئی عمارتیں تعمیر کرنے کی بجائے موجودہ طبی اداروں ،انفرا سٹرکچر جدید سہولیات ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 29/04/2015 - 22:57:37 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 22:49:35 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 21:15:10 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 20:41:43 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 20:08:03 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 19:55:57 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 18:26:09 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 18:06:36 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 17:16:23 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 16:30:44 وقت اشاعت: 29/04/2015 - 16:10:09

صوبائی حکومت نئی عمارتیں تعمیر کرنے کی بجائے موجودہ طبی اداروں ،انفرا سٹرکچر جدید سہولیات سے آراستہ کررہے ہیں،شہرام خان ترکئی

صوبے کے بڑے تدریسی ہسپتالوں کو خودمختار بنایا جا رہا ہے ،تمام تر ضروری قانون سازی کر لی گئی ہے، لیڈی ریڈنگ ہسپتال پشاور کو شوکت خانم ہسپتال کے طرز پر ترقی دینے کیلئے عملی کام شروع کر دیا گیا ہے ،وزیرصحت خیبرپختونخوا

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 29اپریل۔2015ء)خیبر پختونخوا کے سینئر وزیر برائے صحت شہرام خان تراکئی نے کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت نئی عمارتیں تعمیر کرنے کی بجائے موجودہ طبی اداروں اور انفرا سٹرکچر کو تمام تر ضروری سہولیات سے آراستہ کر کے ان کی استعداد کار کو بڑھانے پر کام کر رہی ہے ۔صوبے کے بڑے تدریسی ہسپتالوں کو خودمختار بنایا جا رہا ہے جس کے لئے تمام تر ضروری قانون سازی کر لی گئی ہے لیڈی ریڈنگ ہسپتال پشاور کو شوکت خانم ہسپتال کے طرز پر ترقی دینے کے لئے عملی کام شروع کر دیا گیا ہے جس کے لئے نجی شعبے کے ماہرین کی خدمات حاصل کر لی گئی ہے عنقریب ان تدریسی ہسپتالوں کے بورڈز آف گورنرز تشکیل دئیے جائیں گے جسے ان ہسپتالوں کے معیار اور کارکردگی میں نمایاں تبدیلی نظر آئے گی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کے روز پشاور پریس کلب میں منعقدہ فری میڈیکل کیمپ کے دورہ کے موقع پر ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا جس کا اہتمام پشاور پریس کلب نے ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے تعاون سے کیا تھا۔صوبائی وزیر نے کہا کہ انہیں صحت کا شعبہ انتہائی خراب حالت میں ملا ہے گزشتہ65سالوں کی خرابیاں ایک مہینے میں ٹھیک نہیں ہو سکتی لیکن ہم ان خرابیوں کو دورکر کے ہسپتالوں کے معیار کو عوام کی توقعات اور ضروریات کے مطابق بنانے کے لئے نہ صرف پرعزم ہیں بلکہ نتیجہ خیز عملی اقدامات بھی کر رہے ہیں۔

ہمارا کوئی ذاتی ایجنڈا نہیں ہے ہم نہ خود غلط کام کریں گے اور نہ کسی کو کرنے دیں گے۔ایک سوال کے جواب میں صوبائی وزیر نے کہا کہ ہیلتھ ریگولیٹری اتھارٹی ایک غیر فعال ادارہ تھا ہم نے آتے ہی اس کو فعال اور مضبوط بنانے کے لئے قانون سازی کی ہے اور اس کے لئے بورڈزآف گورنرز تشکیل دے رہے ہیں اب ہیلتھ کیئر کمیشن نے اپنا کام شروع کر دیا ہے اور بلا تفریق صوبہ بھر میں غیر قانونی کلینکس ، لیبارٹریز اور غیر سند یافتہ ڈاکٹروں کے خلاف کریک ڈاؤن کا آغاز ہو گیا ہے کیونکہ یہ ادارہ مکمل طور پر خود مختار اور سیاسی اثر رسوخ سے آزاد ہے۔

قبل ا زیں صوبائی وز یر نے ہیلتھ کیمپ کے مختلف شعبوں کا دورہ کیا اور صحافی برادری کو تمام تر مفت سہولیات ایک ہی جگہ فراہم کرنے پر پریس کلب اور ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے کردار کی تعریف کی۔

29/04/2015 - 19:55:57 :وقت اشاعت