بند کریں
صحت صحت کی خبریںسخت گرمی کے باعث جسم میں پانی کی کمی واقع ہوسکتی ہے، سحر و افطار میں پانی کا استعمال بڑھا دینا ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 24/06/2015 - 12:06:12 وقت اشاعت: 23/06/2015 - 16:27:47 وقت اشاعت: 22/06/2015 - 16:50:12 وقت اشاعت: 22/06/2015 - 16:05:06 وقت اشاعت: 22/06/2015 - 15:40:39 وقت اشاعت: 22/06/2015 - 13:55:42 وقت اشاعت: 22/06/2015 - 12:50:18 وقت اشاعت: 21/06/2015 - 15:14:53 وقت اشاعت: 20/06/2015 - 16:50:08 وقت اشاعت: 20/06/2015 - 15:16:02 وقت اشاعت: 20/06/2015 - 14:37:25

سخت گرمی کے باعث جسم میں پانی کی کمی واقع ہوسکتی ہے، سحر و افطار میں پانی کا استعمال بڑھا دینا چاہیئے۔ماہرین صحت

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 22 جون۔2015ء)ماہرین نے صحت نے رمضان المبارک میں سخت گرمی کے باعث جسم میں پانی کی کمی کو پورا کرنے کے مفید مشورے دیئے ہیں۔ماہرصحت حکیم عبدالرحمن نے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے کہاہے کہ سخت گرمی کے باعث جسم میں پانی کی کمی واقع ہوسکتی ہے، جس کے لئے سحر و افطار میں پانی کا استعمال بڑھا دینا چاہیئے، پانی یا پھلوں کے رس زیادہ سے زیادہ پیئیں اپنی غذا میں دودھ اور دہی کا استعمال بھی ضرور کریں۔

انہوں بتایا کہ سحری میں کم از کم دو گلاس پانی لازمی پیئیں جبکہ جوس اور کولڈ سے دور رہیں یہ آپکا وزن بڑھائیں گئیں۔ایسے کھانے کا استعمال کریں جس میں پانی کی مقدار زیادہ ہو جسیے تربوز ، کھیرا، سلاد آپ کو پانی کی کمی سے روکنے میں مددگار ثابت ہونگے۔افطار کے اوقات میں ایک ساتھ 7 یا 8 گلاس پانی پینے سے کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔روزہ افطار کو کھجور اور دو گلاس پانی کے ساتھ افطار کریں۔

جب رات میں نماز تراویح اور دوسری عبادات کے لئے جائیں تو پانی کی بوتل کو ساتھ لے کر جائیں ۔رات کو ایک پانی کی بوتل اپنے قریب رکھیں۔کوشش کریں کہ گرم اور دھوپ والی جگہ پر کم سے کم جائیں۔واضح رہے کہ ماہ صیام کے آغاز سے ہی ملک کے بیشتر علاقے شدید گرمی کی لپیٹ میں ہیں، کراچی سمیت ملک کے بیشتر ترعلاقوں میں گرمی کی شدت برقرارشدید گرمی اور حبس کی وجہ سے روزہ داروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

22/06/2015 - 13:55:42 :وقت اشاعت