بند کریں
صحت صحت کی خبریںسکاٹ لینڈ یارڈ کی ٹیم نے بے نظیربھٹو کو طبی امداد دینے والے ڈاکٹروں ، پولیس افسران اور عینی ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 16/01/2008 - 14:26:17 وقت اشاعت: 16/01/2008 - 13:20:41 وقت اشاعت: 15/01/2008 - 13:58:21 وقت اشاعت: 14/01/2008 - 22:44:41 وقت اشاعت: 14/01/2008 - 13:12:01 وقت اشاعت: 13/01/2008 - 18:17:56 وقت اشاعت: 13/01/2008 - 16:54:17 وقت اشاعت: 13/01/2008 - 14:09:26 وقت اشاعت: 12/01/2008 - 12:12:21 وقت اشاعت: 11/01/2008 - 16:22:50 وقت اشاعت: 08/01/2008 - 17:14:18

سکاٹ لینڈ یارڈ کی ٹیم نے بے نظیربھٹو کو طبی امداد دینے والے ڈاکٹروں ، پولیس افسران اور عینی شاہدین کے بیانات ریکارڈ کیے جائے شہادت کے قریب نصب سائن بورڈ پر فائرنگ سے ہونیوالا سوراخ بھی مل گیا ۔ مختلف زاویوں سے تصاویر بنالی گئیں۔(اپ ڈیٹ)

راولپنڈی(اردوپوائنٹ اخبا ر تازہ ترین 13. جنوری2008 )محترمہ بے نظیربھٹوکیس کی تحقیقات کرنیوالے برطانوی ادارے سکاٹ لینڈ یارڈ کی ٹیم نے تحقیقات کے تیسرے مرحلے میں بے نظیربھٹو کو طبی امداد دینے والے ڈاکٹروں  جائے وقوعہ پر موجود پولیس افسران اور عینی شاہدین کے بیانات ریکارڈ کیے جبکہ سکاٹ لینڈ یارڈ کی ٹیم کو جائے شہادت کے قریب نصب سائن بورڈ پر فائرنگ سے ہونیوالا سوراخ بھی ملا ہے جس کی جدید آلات کے ذریعے مختلف زاویوں سے ویڈیو اور تصاویربنوائی گئیں اور مختلف پہلوؤں سے جائزہ لیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق اتوار کو صبح آٹھ بجے سکاٹ لینڈ یارڈ کی سات رکنی ٹیم کو پولیس لائن سے سخت حفاظتی حصار میں لیاقت باغ لایا گیا جہاں پر انہوں نے تقریباً چھ گھنٹے تک تحقیقات کی ٹیم کے ہمراہ سی پی او سعود عزیز  ایس ایس پی آپریشنل یاسین فاروق  ایس پیز خرم شہزاد وڑائچ  سلطان محمود چدھڑ اور دیگر پولیس افسران بھی موجود رہے تحقیقاتی ٹیم نے جائے حادثے کے قریب فائرنگ سے ہونے والے ایک سوراخ پر پولیس افسران سے پوچھ گچھ کی اور اس کھوج ہیں رہے کہ یہ سوراخ پسٹل  رائفل یا کسی دیگر اسلحہ سے ہوا ہے تحقیقاتی ٹیم نے سابقہ ریکارڈ کی روشنی میں ایس ایس پی آپریشنل یاسین فاروق کے بیانات ریکارڈ کیے گئے صبح آٹھ بجے سے دو بجے تک ٹیم نے لیاقت باغ جلسہ گاہ سے جانے حادثے تک ماہرانہ انداز میں اپنی تحقیقات مکمل ہے اور شواہد اکٹھے کیے بعد ازاں تحقیقات ٹیم کو سخت حفاظتی حصار میں سابق وزیراعظم محترمہ بے نظیربھٹو کو طبی امداد دینے والے ڈاکٹروں کی ٹیم سے ملا گیا جہاں ٹیم نے ڈاکٹر مصدق اور دیگر ڈاکٹروں کے الگ الگ بیانات ریکارڈ کیے ٹیم نے ڈاکٹروں سے پوچھا کہ بے نظیربھٹو کوکیا گولی لگی تھی ان کے سر پر گہرا زخم کس چیز سے ہوا تھا آپ نے پوسٹ مارٹم کیوں نہیں کیا  ڈاکٹروں نے ٹیم کو بتایا کہ ورثاء کی طرف سے اجازت نہ ملنے پر پوسٹمارٹم نہیں کیا گیا۔

۔
13/01/2008 - 18:17:56 :وقت اشاعت