بند کریں
صحت صحت کی خبریںبھارت کے بڑے ہسپتالوں میں گردوں اور جسمانی اعضاء کی غیرقانونی خریدوفروخت میں ملوث گروہ کے ..

صحت خبریں

وقت اشاعت: 09/06/2016 - 13:05:54 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 18:23:33 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 16:23:09 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 15:01:53 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 14:12:22 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 14:07:08 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 14:00:31 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 13:59:08 وقت اشاعت: 08/06/2016 - 11:26:47 وقت اشاعت: 07/06/2016 - 15:19:31 وقت اشاعت: 06/06/2016 - 18:40:53

بھارت کے بڑے ہسپتالوں میں گردوں اور جسمانی اعضاء کی غیرقانونی خریدوفروخت میں ملوث گروہ کے سربراہ گرفتار

نئی دہلی ۔ 8 جون(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔08 جون۔2016ء) بھارتی پولیس نے ملک کے بڑے ہسپتالوں میں گردوں اور جسمانی اعضاء کی غیرقانونی خریدوفروخت میں ملوث گروہ کے سربراہ کو گرفتار کر لیا۔ پولیس حکام کے مطابق راجکمار راؤ کو مشرقی شہر کولکتہ سے گرفتار کیا گیا جو ایک ایسے گروہ کا سربراہ ہے جو غریب لوگوں کو اپنا گردہ اور جسمانی اعضاء بیچنے کیلئے لالچ دیتا اور انہیں بھاری منافع پر فروخت کرتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق بھارت میں جسمانی اعضاء کی خرید و فروخت کو غیرقانونی قرار دیا گیا ہے۔ مذکورہ گینگ اپولو ہسپتال میں ٹرانسپلانٹیشن کیلئے جعلی دستاویزات بنواتا جن میں گردے فروخت کرنے والے افراد کو مریض کا رشتہ دار ظاہر کیا جاتا تھا۔ پولیس کے تفتیشی افسر ندھن ویلسن نے میڈیا کو بتایا کہ راج کمار راؤ کو کولکتہ سے گرفتار کیا گیا۔ کولکتہ پولیس کے ایک افسر کا کہنا ہے کہ راج کمار راؤ اس طرح کے کئی مقدمات میں دیگر جنوبی ایشیائی ممالک کو بھی مطلوب تھا۔

بھارتی پولیس نے گزشتہ روز اپنے گردے فروخت کرنے والے 3 افراد کو بھی گرفتار کیا جن میں 2 میاں بیوی بھی شامل ہیں جنہوں نے اپنے بیٹے کے علاج معالجے کی خاطر لئے گئے قرضے کی ادائیگی کیلئے اپنے گردے 7 لاکھ روپے میں فروخت کئے۔ رپورٹ کے مطابق پولیس نے اپولو ہسپتال کے عملہ کے 5 افراد کو بھی حراست میں لے لیا ہے تاہم اپولو ہسپتال کے حکام نے سکینڈل میں ملوث ہونے کے کسی بھی امکان کو رد کر دیا ہے۔

08/06/2016 - 14:07:08 :وقت اشاعت