سعودی عرب کی انتظامی عدالتیں تیزی سے مقدمات نمٹانے لگیں

انتظامی عدالتوں نے گزشتہ ہجری سال کے دوران نان و نفقے سے متعلق ہزاروں کیس نمٹا دیئے

Muhammad Irfan محمد عرفان جمعرات ستمبر 13:01

سعودی عرب کی انتظامی عدالتیں تیزی سے مقدمات نمٹانے لگیں
جدہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین،5 ستمبر، 2019 ء) سعودی عرب کی انتظامی عدالتیں تیزی سے مقدمات نمٹانے لگیں۔ انتظامی عدالتوں نے گزشتہ ہجری سال کے دوران نان و نفقے سے متعلق ہزاروں کیس نمٹا دیئے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی عرب کی انتظامی عدالتوں کی جانب سے مجموعی طور پر 10 ہزار 937 والدین اور سرپرست حضرات کو 'نفقے' کی مد میں 12 کروڑ 20 لاکھ ریال کی رقم فوری طورپرادا کرنے کا حکم دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یہ اعدادو شمارسال 1440ھ کے دوران کے ہیں جن میں والدین کو نفقے کیسز میں مذکورہ رقوم کی ادائی کا حکم دیا ہے۔سعودی عرب کی عدالتوں کی طرف سے جرمانوں اور نان نفقے کی ادائیگی میں غفلت برتنے والے والدین کو خبردار کیا گیا ہے کہ وہ واجب الادا رقوم فوری طورپر ادا کریں۔

(جاری ہے)

سعودی وزارت انصاف کے مطابق مکہ معظمہ سے نان نفقے کی مطالبے کی 4 کروڑ ریال مالیت کی 3893 درخواستیں دی گئیں۔

الریاض سے 2664 درخواستیں دائر کی گئیں جن میں 3 کروڑ 96 لاکھ ریال نفقے کا مطالبے کیا گیا۔نجران کے علاقے سے 30 درخواستیں دی گئیں جن میں مجموعی طورپر ایک لاکھ 46 ہزار ریال کی رقم کاتقاضا کیاگیا۔خیال رہے کہ سعودی عرب کے وزیر انصاف وقانون ولید الصمعانی نے عدالتوں کو ہدایت کی تھی کہ وہ بچوں کے تحفظ کے نظام کے تحت والدین سے ان پر واجب الادا نفقے کی رقم جلد از جلد وصول کریں۔سعودی عرب میں عدالتوں کا ریکارڈ کمپیوٹرائزڈاور آن لائن کرنے کی جانب بھی خصوصی زور دیا جا رہا ہے جس سے یہ توقع کی جاتی ہے کہ لوگوں کو انصاف کی فراہمی کا عمل پہلے سے زیادہ تیز تر اور بہترہو جائے گا۔

جدہ میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments