دُبئی میں مقیم پاکستانی انجینئر نے شاندار کارنامہ انجام دے دیا

طحہ انصاری نے مکمل طور پر سولر انرجی سے چلنے والی سمارٹ کار بنا لی

Muhammad Irfan محمد عرفان بدھ اگست 17:44

ابوظہبی (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 7 اگست2019ء) پاکستانی قوم بلاشبہ بے پناہ ٹیلنٹ سے مالا مال قوم ہے۔ پاکستانی نوجوان نہ صرف اندرون ملک بلکہ پردیس میں بھی اپنی قابلیت کے جھنڈے گاڑ رہے ہیں اور اپنا نام بنانے کے ساتھ ساتھ ملک کے وقار اور شان میں بھی اضافہ کر رہے ہیں۔ ایسا ہی ایک پاکستانی نوجوان طحہ انصاری ہے۔ مکینیکل انجینئرنگ کے شعبے سے تعلق رکھنے والے اس ہونہار نوجوان نے اپنی ایک شاندار کامیابی کی داستان اُردو پوائنٹ کے ساتھ بھی شیئر کی ہے ۔

طحہ انصاری نے بتایا کہ وہ ابو ظہبی کی خلیفہ یونیورسٹی میں سینیئر مکینیکل انجینئرنگ اور ریسرچ انڈر گریجو ایٹ ہیں۔ یہ یونیورسٹی متحدہ عرب امارات کی نامور یونیورسٹیوں میں شمار ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ امریکن سوسائٹی آف مکینیکل انجینئرز سٹوڈنٹ چیپٹر کے چیئر پرسن بھی ہیں۔

(جاری ہے)

ابو ظہبی میں مقیم طحہ نے اپنے جیسے ہی چند باصلاحیت نوجوانوں کے ساتھ مل کر ایسی سمارٹ کار بنائی ہے جو سولر انرجی سے چلتی ہے۔

اگرچہ ایسی کاریں پہلے بھی بنائی گئی ہیں تاہم طحہ کے مطابق یہ پہلی سمارٹ کار ہے جو مکمل طور پر سولر انرجی پر ہی کام کر رہی ہے۔ جس کا مطلب ہے کہ اس اسمارٹ کار کو چلانے کے لیے کسی بھی مرحلے پر سولر انرجی کے علاوہ کسی دیگر انرجی ذریعہ کی ضرورت نہیں پڑے گی۔یہ شاندار اور کم قیمت کار وائرلیس چارجر سے چارج ہونے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ اس کے علاوہ اس میں ایئر کولر، وائر لیس سپیکرز کی سہولت بھی موجود ہے۔

طحہ نے بتایا کہ یہ سولر کار خلیفہ یونیورسٹی کے ان سٹوڈنٹس کی سہولت کے لیے تیار کی گئی ہے جو کیمپس میں ہی رہائش پذیر ہیں اور انہیں کیمپس میں شدید گرمی کے موسم میں آگ برساتے ہوئے سورج کی موجودگی میں پیدل ایک جگہ سے دوسری جگہ جانا پڑتا ہے۔ طحہ نے اُردو پوائنٹ کو بتایا کہ وہ اپنی اس انوکھی اور کم قیمت ایجاد کی دُنیا بھر میں تشہیر چاہتے ہیں تاکہ لوگ ان کی اس ایجاد سے فائدہ اُٹھا سکیں۔

ابو ظہبی میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments