دُبئی: پاکستانی ملازمین کی 13 سالہ لڑکے سے متعدد بار جنسی زیادتی

ملزم متاثرہ لڑکے کو ڈرائیونگ سکھانے کے بہانے اُسے ہوس کا نشانہ بناتے رہے

Muhammad Irfan محمد عرفان پیر جنوری 16:07

دُبئی: پاکستانی ملازمین کی 13 سالہ لڑکے سے متعدد بار جنسی زیادتی
دُبئی(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔7 جنوری 2019ء) پولیس نے دو پاکستانی نوجوانوں کو ایک ہم وطن بچے کو ڈرائیونگ سکھانے کے بہانے کئی بار جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔تیرہ سالہ پاکستانی بچے نے پولیس کو بتایا کہ ایک روز وہ اپنی ہی رہائشی بلڈنگ میں مقیم دوست کو ملنے جا رہا تھا جب اُس کی 34 سالہ ملزم سے ملاقات ہوئی۔ ملزم نے اُسے آفر کی کہ اگر وہ اُس کے ساتھ جنسی فعل کرے تو وہ بدلے میں اُسے 500یا 600درہم دے گا، یوں رقم کا لالچ دے کر اُس نے بچے سے زیادتی کر ڈالی۔

ملزم بعد میں بچے کے موبائل نمبر پر فحش میسج بھی بھیجتا رہا۔ ملزم نے اپنے ایک اور ساتھی کو بھی بچے کے بارے میں بتایا جس کے بعد اُس نے فیصلہ کیا کہ وہ بچے کو ڈرائیونگ سکھانے کے بہانے اُس سے جنسی لذت حاصل کرے گا۔

(جاری ہے)

ملزم کا ساتھی، بچے کو ڈرائیونگ سکھانے کے بہانے ایک سنسان مقام پر لے گیا اور اُس سے زبردستی اپنی ہوس پُوری کر ڈالی۔ تین ہفتوں بعد اس شخص نے اُس سے اپنے شرمناک فعل پر معذرت کرتے ہوئے اُسے کہا کہ اب کی بار وہ اسے سچ مچ ڈرائیونگ سکھائے گا۔

بچہ ایک بار پھر اُس پر اعتبار کرتے ہوئے ساتھ چل پڑا۔ مگر ملزم نے اُسے دوبارہ اپنی حیوانیت کا شکار بنا ڈالا۔ وقوعے کے روز بچہ جب مسجد سے باہر نکلا تو پہلے والے ملزم نے اُس سے دوبارہ زیادتی کرنا چاہی تاہم وہ وہاں سے بھاگ کھڑا ہوا اور اپنے بڑے بھائی کو جا کر ساری صورتِ حال سے آگاہ کر دیا۔ بچے کے والد نے دونوں ملزمان کے خلاف پولیس میں شکایت درج کروا دی۔ ملزم نمبر 2نے دورانِ تفتیش انکشاف کیا اکہ اُس نے بچے کوڈرائیونگ سکھانے کے بہانے پانچ سے زائد بار زیادتی کا نشانہ بنایا۔ جبکہ ملزم نمبر 1نے بھی اپنی شیطانی حرکت کا اعتراف کر ڈالا۔

متعلقہ عنوان :

دبئی میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments