دُبئی: پاکستانی سُپروائزر نے ڈِنر کے بہانے خاتون کی عزت لُوٹ لی

ملزم غیر مُلکی خاتون کو اغوا کر کے دُور دراز کے علاقے میں لے گیا

Muhammad Irfan محمد عرفان منگل فروری 12:56

دُبئی: پاکستانی سُپروائزر نے ڈِنر کے بہانے خاتون کی عزت لُوٹ لی
دُبئی(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔12فروری 2019ء) پولیس نے ایک پاکستانی نوجوان کو غیر مُلکی خاتون سے زیادتی اور اغواء کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق 29 سالہ پاکستانی نوجوان ایک کمپنی میں پراجیکٹ سُپروائزر ہے۔ جس نے واٹس ایپ پر ایک25 سالہ فلپائنی لڑکی سے تعلقات اُستوار کیے اور پھر وقوعے کے روز اُسے ڈِنر پر بُلایا۔ خاتون نے پہلے تو اس دعوت سے انکار کیا جس پر ملزم نے اُسے اپنی شرافت کا یقین دلایا۔

ایک ریسٹورنٹ میں ملاقات کے بعد ملزم نے اُسے اپنی گاڑی میں یہ کہہ کر سوار کر لیا کہ وہ اُسے گھر چھوڑ دیتا ہے۔ مگر فلپائنی لڑکی اُس وقت پریشان ہو گئی جب ملزم نے اپنی گاڑی شہر سے دُور جانے والی ایک ویران سڑک پر ڈال لی۔ جہاں ملزم نے صحرائی علاقے میں گاڑی سڑک سے اُتار لی، خاتون کو اگلی سیٹ سے کھینچ کر نکالا اور پچھلی سیٹ پر لے گیا۔

(جاری ہے)

خاتون نے ملزم کی بہت منت سماجت کی مگر جنسی جذبات سے مغلوب نوجوان نے اُس کے جسم سے سارے کپڑے اُتار لیے اور پھر اُسے اپنی ہوس کا نشانہ بنا ڈالا۔

جنسی عمل کے دوران جب خاتون نے مزاحمت کی کوشش کی تو پاکستانی نوجوان نے اُسے مار پیٹ کا نشانہ بھی بنایا جس دوران خاتون کے جسم کے مختلف حصّوں پر خراشیں بھی آئیں۔ خاتون نے ملزم کی اس شرمناک حرکت کے بعد جبلِ علی کے پولیس اسٹیشن میں درخواست جمع کروا دی۔ تاہم ملزم نے اپنے خلاف عائد الزامات کو درست تسلیم کرنے سے انکار کر دیا۔ ملزم کا کہنا تھا کہ اُس نے اورفلپائنی خاتون نے آپس میں زنا بالرضا کا ارتکاب کیا ہے، اس لیے اُس پر زیادتی کا الزام لاگو نہیں ہوتا۔ مقدمے کی اگلی سماعت 19 فروری 2019ء کو ہو گی۔

دبئی میں شائع ہونے والی مزید خبریں:

Your Thoughts and Comments