Dhakka - Joke No. 1516

دھکا - لطیفہ نمبر 1516

کشتی کے ذریعے کچھ عورتیں اور مرد دریا پار کر رہے تھے۔ ان میں ایک سکھ نوجوان بھی شامل تھا۔ کشتی جو نہی دریا کے وسط میں پہنچی ایک عورت کا بچہ دریا میں گر گیا۔ اس نے چلانا شروع کر دیا کہ خدا کے لئے کوئی میرے بچے کو بچائے۔ اچانک سکھ نوجوان دریا میں کو د پڑا۔ اس نے کافی محنت اور جدوجہد کے بعد بچے کو بچا لیا اور اٹھا کر کنارے پر لے آیا۔ لوگوں نے خوشی سے تالیاں بجائیں اور سکھ نوجوان زندہ باد کے نعرے لگائے، اور کہا کہ تم نے واقعی اپنی جان پر کھیل کر ایک ماں کے بہنے والے آنسوؤں کو روکا ہے، اس کی آنکھ کا تارا اس سے ملایا ہے۔ سکھ نوجوان غصے سے دانت پیستے ہوئے بولا۔ ”یہ فضول باتیں بعد میں کرنا، پہلے یہ بتاؤ کہ مجھے دھکا کس نے دیا تھا ؟“

مزید لطیفے

ایک جوان لڑکی

Aik jawan larki

بولی

boli

ایک دوست دوسرے سے

aik dost dosray se

ڈاکٹر

doctor

ہیلپر

Helper

ممی

Mumy

کروڑ پتی

crorepati

سکھ

Sikh

ابو تنگ سوراخ میں

abu tang sorakh mein

ایک پادری

Aik padri

بلا تکلف

bila takalluf

گدھے

gadhe

Your Thoughts and Comments