Jang E Azeem Doam - Joke No. 823

جنگ عظیم دوم - لطیفہ نمبر 823

جنگ عظیم دوم کے دوران جرمنی میں بیمار جنگی قیدیوں کو ایک نوجوان لیڈی ڈاکٹر‘ صبح پانچ بجے سوتے ہوئے اٹھا دیتی تھی۔ اگر کوئی قیدی اٹھنے میں ذرا سستی کرتا تو سخت سردی کے عالم میں اس کے اوپر سے کمبل کھینچ لیتی۔ کچھ دنوں تک بیمار قیدیوں نے اس کے مظالم برداشت کئے مگر صبر کی بھی کوئی حد ہوتی ہے۔ آخر انہوں نے سونے سے قبل دماغ لڑایا۔ اور لیڈی ڈاکٹر کے مظالم سے نجات حاصل کرنے کی ایک ترکیب پر متفق ہو کر سوگئے۔ اگلے روز صبح پانچ بجے جب لیڈی ڈاکٹر قیدیوں کو جگانے کے لئے نازل ہوئی تو اس نے دیکھا کہ تمام قیدیوں کے شب خوانی کے لباس تہہ کئے سرہانے کی میز پر پڑے ہیں اور قیدی برہنہ جسم پر کمبل لپٹے نیند کے مزے لے رہے تھے۔ اس کے بعد اسے کسی قیدی کے جسم سے کمبل نوچنے کی ہمت نہ ہوئی۔

مزید لطیفے

قلم

Film

رات گئے

raat gaye

بلا تکلف

bila takalluf

استاد شاگرد سے

Ustad shagid sai

ماں بیٹے سے

Maa bete se

پہل

pehal

یہ کمبل کہاں لیے جا رہے ہو؟

yeh kambal kahan liye ja rahe ho?

شکور

Shakoor

ایک دوست

Aik dost

ایک بے وقوف

aik bewakoof

غلط بس

ghalat bus

یاداشت

Yaadasht

Your Thoughts and Comments