Neend Ud Gayi

نیند اڑ گئی

رات کے دو بجے ایک مریض نے اپنے ڈاکٹر کو فون کیا۔ ”ڈاکٹر صاحب ، معافی چاہتا ہوں کہ آپ کو زحمت دی۔ لیکن کیا کروں مجھے نیند نہیں آرہی۔ “ ”میں نے آپ کو نیند کی جو دوائی دی تھی۔ وہ استعمال کر یں، نیند آجائے گی۔ “ ڈاکٹر نے مشورہ دیا۔ ”میں وہ دوائی بھی استعمال کر چکا ہوں۔ مگر مجھے نیند نہیں آرہی۔ ڈاکٹر صاحب … دراصل آپ نے مجھے فیس کا جوبل بھجوایا ہے۔ اس نے میری نیند اڑادی ہے۔ بخدا، میں یہ بل ادا نہیں کر سکتا۔“ ”اوہ میرے خدا۔ “ ڈاکٹر نے کہا۔ ”یہ تم نے مجھے کیا کہہ دیا۔ اب میری نیند اڑ گئی ہے۔ “

Your Thoughts and Comments