Professor - Joke No. 446

پروفیسر - لطیفہ نمبر 446

اعداد و شمار کے ماہر پروفیسر نے ایک مرتبہ اپنے دوستوں کو بتایا:”اوسط درجے کا ایک آدمی روزانہ تقریباً دس ہزار الفاظ بولتا ہے جبکہ اوسط درجے کی عورت روزانہ تیس ہزار الفاظ بولتی ہے“۔ پھر وہ آہ بھر کر بولے:”بدقسمتی سے شام کو جب میں گھر پہنچتا ہوں تو اپنے دس ہزار الفاظ استعمال کر چکا ہوتا ہوں جبکہ میری بیوی اپنے تیس ہزار الفاظ بولنے کا آغاز کرتی ہے“۔

مزید لطیفے

باپ

Baap

سیاح کسان سے

Sayyah Kisan Se

ایک بڑھیا

aik budiya

ایک شخص

Aik Shakhs

ایک کنجوس

Aik kanjoos

سپاہی

Sipahi

سیاح

Siah

ڈاکڑ

Doctor

طلاق

talaq

ریل میں سفر

rail mein safar

گم شدگی

gumshudgi

میچ

Match

Your Thoughts and Comments