Qeemat - Joke No. 1205

قیمت - لطیفہ نمبر 1205

ایک روز ملا بازار گیا تو دیکھا کہ وہاں بڑی تعداد میں پرندے بک رہے تھے۔ ایک ایک پرندے کی قیمت پانچ پانچ سو روپے پڑ رہی تھی۔ ملا نے سوچا کہ میرے پاس جو پرندہ ہے وہ تو ان سے بڑا ہے اور یقیناً اس کی قیمت بھی زیادہ ہو گی۔ اگلے روز وہ اپنی مرغی لے کر بازار پہنچ گیا لیکن کوئی بھی اس کے پچاس روپے بھی دینے کے لیے تیار نہ ہوا۔ ملا کو غصہ آیا اور چیخنے لگا۔ ”لوگو! یہ کتنی بے غیرتی کی بات ہے کہ کل تم اس سے کئی گنا چھوٹے پرندے دس گنا قیمت پر خرید رہے تھے۔“

مزید لطیفے

مریض

Mareez

دماغ

dimagh

خط

Khat

معصومیت

masoomiyat

دیہاتی

dehati

ملا نصیر الدین

mullah nasser Aldeen

ایک دوست دوسرے سے

Aik dost doosre dost se

بیمار

bemaar

پالتو کتا

Paltu Kutta

ترکیب نمبر9

Tarkeeb No 9

لیڈی ٹیچر

Lady teacher

آمنے سامنے

aamne samne

Your Thoughts and Comments