Abhi To Umar Baki Hai - Article No. 1290

ابھی تو عمر باقی ہے۔۔تحریر:رحمت اللہ شیخ

یاد رکھو! اس دنیا میں آنے کی تو ترتیب ہے لیکن جانے کی کوئی ترتیب نہیں۔ موت اچانک تمہیں آلے گی اور تمہیں بلکل بھی مہلت نہیں ملے گی۔ لہٰذا مرنے سے پہلے اپنے لیے کچھ کرلو

ہفتہ فروری

abhi to umar baki hai
”تھوڑی سی زندگی انجوائے کرلوں ، پھر جب آپ کی عمر کی ہوجاوٴں گی نا تو آپ ہی کی طرح ایک چارپائی پر تسبیح لے کر بیٹھ جاوٴں گی“ اس نے جلدی جلدی اپنا موبائل فون اٹھایا اور کانوں میں ہیڈفون لگا کر خارجی دروازے کی طرف چل پڑی۔ "اوہ! شاید وہ کچھ بھول رہی تھی۔
وہ واپس مڑی اور دادی ماں کی طرف آنے لگی۔ دادی صحن میں ایک چارپائی پر بیٹھی ہاتھ میں تسبیح لیے ذکر کرنے میں مصروف تھیں۔ "دادی ماں! میں جارہی ہوں کالج" اس نے دادی کے پیروں پر ہاتھ رکھ کر دعا لی اور واپس جانے کے لیے مڑی۔ دادی نے پیار سے اس کا ہاتھ پکڑا، اسے بٹھایا اور شفقت سے اس کے سر پر اپنا ہاتھ پھیرتے ہوئے بولیں۔
"سائرہ ! کتنا اچھا ہوگا کہ اگر تم صبح تھوڑی دیر سویرے اٹھ جاوٴ اور نماز و تلاوتِ قرآن کے بعد کالج چلی جاوٴ۔

(جاری ہے)

" "ہاں دادی کل سے شروع کروں گی" اس نے بیزاری میں جواب دیا "ویسے بھی ابھی میں بوڑھی نہیں ہوئی ہوں تھوڑی سی زندگی انجوائے کرلوں ، پھر جب آپ کی عمر کی ہوجاوٴں گی نا تو آپ ہی کی طرح ایک چارپائی پر تسبیح لے کر بیٹھ جاوٴں گی اور سارا دن ذکر کیا کروں گی" اس نے ہیڈ فون کان میں لگائے اور دروازے کی اور چل پڑی۔

پیچھے سے دادی حسرت بھری نگاہوں سے اسے دیکھتی رہی۔ "کچھ ہی دیر پہلے شہر کے ہائے وے پر کار اور ٹرک کے درمیان ایک زبردست تصادم ہوا ہے۔ جس کی وجہ سے کار میں موجود دو افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ ہلاک ہونے والوں میں ایک لڑکی اور کار ڈرائیور شامل ہیں۔
" نیوز چینلز پر یہ خبر بریکنگ نیوز بنی ہوئی تھی۔ سائرہ کے گھر میں یہ خبر ایٹم بم بن کر گری۔ پورے گھر میں صفِ ماتم بچھ چکی تھی۔ والدین غم سے نڈھال بے اختیار رو رہے تھے۔ بھائیوں کی آنکھیں اپنی اکلوتی بہن کی جدائی میں برس رہی تھیں۔
چارپائی پر بیٹھی دادی اماں کی آنکھوں سے آنسووٴں کی لڑی جاری تھی۔ ہر طرف دکھ درد کا عالم تھا۔ اور اسی عالم میں ایک بے آواز پیغام سب کو جھنجوڑ رہا تھا: "بچو !یاد رکھو! اس دنیا میں آنے کی تو ترتیب ہے لیکن جانے کی کوئی ترتیب نہیں۔ موت اچانک تمہیں آلے گی اور تمہیں بلکل بھی مہلت نہیں ملے گی۔ لہٰذا مرنے سے پہلے اپنے لیے کچھ کرلو۔ آج کسی اور کی باری تھی اور کل تمہاری باری ہوگی"

مزید اخلاقی کہانیاں

Khata Ka Putla

خطا کا پُتلا

Khata Ka Putla

Sultan Mehmmod Ghaznawi

ﺳﻠﻄﺎﻥ ﻣﺤﻤﻮﺩ ﻏﺰﻧﻮﯼ

Sultan Mehmmod Ghaznawi

Badshah Ka Janasheen

بادشاہ کا جانشین

Badshah Ka Janasheen

Doo Dost

دودوست

Doo Dost

Bhairiye Ka Bacha Bheeria Hi Hota Hai

بھیڑیے کا بچّہ بھیڑ یا ہی ہوتا ہے

Bhairiye Ka Bacha Bheeria Hi Hota Hai

Safeed Kabootri

سفید کبوتری

Safeed Kabootri

Jhoot Kay Pawo Nh Hoty

جھوٹ کے پائوں نہیں ہوتے

Jhoot Kay Pawo Nh Hoty

Mohammad SAW Hamare Bari Shaan Wale

محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم ہمارے بڑی شان والے

Mohammad SAW Hamare Bari Shaan Wale

Haqeeqi Khazana

حقیقی خزانہ(دوسری اور آخری قسط)

Haqeeqi Khazana

Sacha Khazana

سچا خزانہ

Sacha Khazana

Aazmaish

آزمائش

Aazmaish

Num

”نعم“

Num

Your Thoughts and Comments